’صدارتی انتخاب کے شیڈول میں رد و بدل کریں‘

Image caption خورشید عالم نے بتایا کہ یہ خط الیکشن کمیشن کے ممبران کو بھجوا دیا گیا ہے

پاکستان کے الیکشن کمیشن کے مطابق وزارتِ قانون اور انصاف نے صدارتی انتخابات کے شیڈول میں رد و بدل کی درخواست کی ہے۔

الیکشن کمیشن کے ترجمان خورشید عالم نے بی بی سی کو بتایا کہ قانون اور انصاف کی وزارت نے کمیشن کو لکھے گئے ایک خط میں موقف اختیار کیا ہے کہ پارلیمان کے ارکان کی ایک بڑی تعداد نے ماہ رمضان کے آخری عشرے میں عمرہ کی ادائیگی کے لیے سعودی عرب روانہ ہونا ہے۔

اس خط کے مطابق ان اراکین کی واپسی عیدالفطر کے بعد ہوگی۔

وزارتِ قانون اور انصاف نے کہا ہے کہ صدارتی انتخاب میں ارکان پارلیمان کی زیادہ سے زیادہ شرکت کو یقینی بنانے کے لیے الیکشن کمیشن انتخاب کا شیڈول تبدیل کرے۔

خورشید عالم نے بتایا کہ یہ خط الیکشن کمیشن کے ممبران کو بھجوا دیا گیا ہے اور ان کے اکثریتی فیصلے کے مطابق صدارتی انتخابات کی تاریخ کے حوالے سے فیصلہ کیا جائے گا۔

واضح رہے کہ آئینی تقاضا یہ ہے کہ صدارتی انتخابات آٹھ اگست سے قبل ہو جانے چاہیے۔

الیکشن کمیشن کے شیڈول کے مطابق صدارتی انتخابات چھ اگست کو ہوں گے جبکہ نتائج کا اعلان سات اگست کو کیا جائے گا۔

الیکشن کمیشن کے مطابق کاغذات نامزدگی 24 جولائی کو جمع کرائے جائیں گے۔

کاغذات نامزدگی کی جانچ پڑتال 26 جولائی کو کی جائے گی جبکہ کاغذات واپس لینے کی آخری تاریخ 29 جولائی ہو گی۔

واضح رہے کہ صدر مملکت آصف علی زرداری کے عہدۂ صدارت کی مدت اس سال آٹھ ستمبر کو مکمل ہو رہی ہے۔

صدر آصف علی زرداری نے اس عزم کا اظہار کیا ہے کہ رواں سال کے آخر سے وہ ایک بار پھر سیاست میں آئیں گے اور اس مرتبہ ان کے تینوں بچے بھی سیاست میں اپنا کردار ادا کریں گے۔

الیکشن کمیشن کے مطابق یہ پہلا موقع ہے کہ صدر اپنی آئینی مدت پوری کریں گے اور ایک صدر کے ہوتے ہوئے دوسرے صدر کا انتخاب کیا جائے گا۔

دوسری جانب وزیرِ اطلاعات پرویز رشید نے کہا کہ حکومت نے صدارتی انتخاب کے شیڈول میں ردوبدل کے لیے نہیں کہا بلکہ وہ صرف صدارتی انتخاب کی تاریخ میں تبدیلی چاہتی ہے۔

پرویز رشید نے ریڈیو پاکستان سے بات کرتے ہوئے کہا کہ الیکشن کمیشن کے شیڈول کے مطابق صدارتی انتخابات چھ اگست کو ہوں گے تاہم اس دن لیلۃ القدر کی رات ہو سکتی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ لیلۃ القدر کی وجہ سے متعدد ارکانِ پارلیمان عبادت یا اعتکاف میں مصروف ہوں گے یا پھر عمرے کی ادائیگی کے لیے سعودی عرب میں موجود ہوں گے۔

پرویز رشید کے مطابق حکومت نے الیکشن کمیشن سے درخواست کی ہے کہ وہ صدارتی انتخاب کا انعقاد چھ اگست سے پہلے منعقد کروائے تاکہ پارلیمان کا کوئی بھی رکن اپنا ووٹ ڈالنے کے حق سے محروم نہ ہو۔

ایک سوال کے جواب میں وزیرِ اطلاعات کا کہنا تھا کہ ملک میں ضمنی انتخابات سے پہلے صدارتی انتخاب منعقد کروانے کے بارے میں آئینی پابندی نہیں ہے۔

اسی بارے میں