نواز دور میں دفاعی کمیٹی کا پہلا اجلاس طلب

وزیر اعظم نواز شریف
Image caption وزیراعظم نے بری فوج کے آپریشنل کمانڈر سے چھ اگست کے روز لائن آف کنٹرول پر پیش آنے والے واقعہ کی تفصیلی بریفنگ طلب کی ہے:ذرائع

وزیراعظم میاں نواز شریف نے بھارت کے ساتھ حالیہ کشیدگی اور افغانستان سے امریکی افواج کے انخلاء کے بعد کی صورتحال پر مشاورت کے لیے کابینہ کی دفاعی کمیٹی کا اجلاس جمعرات کے روز طلب کر لیا ہے۔

گیارہ مئی کے انتخابات کے بعد پاکستان کی سول اور فوجی قیادت کے درمیان رابطے کے اس باضابطہ فورم کا یہ پہلا اجلاس ہے۔

بی بی سی کے نامہ نگار آصف فاروقی کے مطابق وزیراعظم کے دفتر کے ذرائع کا کہنا ہے کہ اس اجلاس میں کابینہ کی اس کمیٹی کی تشکیل نو کے لیے بھی بعض اقدامات کیے جائیں گے۔

روایتی طور پر دفاعی امور پر اس اعلیٰ ترین پالیسی ساز ادارے میں وفاقی حکومت کی جانب سے وزرائے خارجہ، خزانہ، دفاع اور داخلہ شامل ہوتے ہیں جبکہ تینوں مسلح افواج کے سربراہان اور چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی بھی اس کمیٹی کے ارکان ہوتے ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ بائیس اگست کو ہونے والے کمیٹی اجلاس کے لیے وزیراعظم نے بری فوج کے آپریشنل کمانڈر سے چھ اگست کے روز لائن آف کنٹرول پر پیش آنے والے واقعہ کی تفصیلی بریفنگ طلب کی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم کی خصوصی دلچسپی ان واقعات کے بارے میں درست حقائق جاننے میں ہے جس کے بعد وہ لائن آف کنٹرول پر کشیدگی کم کرنے کی خاطر بعض اقدامات کی بھی منظوری دیں گے۔

کابینہ کمیٹی برائے دفاع میں افغانستان کی صورتحال پر بھی تفیصلی تبادلہ خیال کیا جائے گا۔ اجلاس کے ایجنڈے کے مطابق، خاص طور پر افغانستان سے امریکی انخلاء کے بعد وہاں کی صورتحال اور پاکستان کے لیے مواقع اور مشکلات پر تفیصلی تبادلہ خیال ہو گا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اس اجلاس میں یہ بھی طے کیا جائے گا کہ آئندہ ہفتے پاکستان کا دورہ کرنے والے افغانستان کے صدر حامد کرزئی کے ساتھ کن امور پر نئے معاہدے کیے جا سکتے ہیں۔

ویسے تو ملکی اعلیٰ سول اور فوجی قیادت اس فورم پر کسی بھی موضوع پر کسی بھی وقت گفتگو کر سکتی ہے لیکن ایجنڈے میں قومی سلامتی پالیسی کی تیاری کو شامل نہیں کیا گیا ہے۔

یاد رہے کہ حکومت آج کل ملک میں قومی سلامتی سے متعلق پالیسی کی تیاری پر تیزی سے کام کر رہی ہے۔

اسی بارے میں