راولپنڈی: ریٹائرڈ بریگیڈیئر اہلخانہ سمیت قتل

Image caption مقامی پولیس کے مطابق جائے حادثہ حساس علاقے میں واقع ہے

پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد کے جڑواں شہر راولپنڈی میں پاکستانی فوج کے ایک ریٹائرڈ افسر کو اُن کی بیوی اور دو بیٹیوں سمیت قتل کر دیا گیا ہے۔

مقامی پولیس اس واقعہ کو ممکنہ طور پر ٹارگٹ کلنگ یا دہشت گردی کی واردات قرار دے رہی ہے۔

مقامی پولیس کے اہلکار فیصل عباد کے مطابق بریگیڈیئر ریٹائرڈ ڈاکٹر ملک سکندر اپنے اہلخانہ کے ہمراہ گلستان کالونی کے علاقے میں رہائش پذیر تھے۔ پیر اور منگل کی درمیانی شب نامعلوم مسلح افراد نے اُن کے گھر میں گھس کر فائرنگ کی جس سے وہ، اُن کی اہلیہ اور دو بیٹیاں ہلاک ہوگئیں۔

پولیس کو اس واقعے کی اطلاع اُس وقت ملی جب بریگیڈیئر (ر) سکندر کا ملازم اُنہیں اُٹھانے کے لیے گھر گیا لیکن دروارزہ نہیں کُھلا۔

مقامی پولیس کا کہنا ہے کہ مقتولین کو گولیاں اُن کے سر اور دل کے قریب ماری گئی ہیں۔ پولیس کے بقول ملزمان نے پستول پر سائلنسر لگایا ہوا تھا جس کی وجہ سے گولیاں چلنے کی آواز نہیں آئی۔

پولیس ذرائع کے مطابق مقتول بریگیڈیئر کا بیٹا فوج میں کپتان ہے اور وقوعے کے روز گھر پر موجود نہیں تھے۔ پولیس کے مطابق اس واقعے کے بعد وہ سکتے میں ہیں اور ابھی کوئی بیان دینے کی حالت میں نہیں ہیں۔

پولیس نے لاشیں قبضے میں لے کر اُنہیں پوسٹمارٹم کے لیے ضلعی ہیڈ کوارٹر ہسپتال منتقل کر دیا ہے جبکہ جائے حادثہ سے شواہد اکٹھے کرنے کے بعد تحقیقات بھی شروع کر دی گئی ہیں۔

مقامی پولیس کا کہنا ہے کہ جائے حادثہ سے ڈکیتی یا چوری کے شواہد نہیں ملے۔

پولیس اہلکار فیصل عباد کے مطابق جس طرح مقتولین کو ٹارگٹ کر کے مارا گیا ہے ایسی ہلاکتیں ڈکیتی کی وارداتوں میں مزاحمت کے دوران نہیں ہوتیں۔ اُنہوں نے کہا کہ عموماً ایسی کارروائیاں شدت پسندی اور ٹارگٹ کلنگ کی وارداتوں میں ہوتی ہیں۔

پولیس کے مطابق اس پہلو پر بھی تحقیقات کی جا رہی ہیں کہ مقتولین کی کسی کے ساتھ کوئی دشمنی تو نہیں تھی۔

مقامی پولیس کے مطابق جائے حادثہ حساس علاقے میں واقع ہے اور اس علاقے میں ہر آنے اور جانے والے کا ریکارڈ رکھا جاتا ہے۔