شریف اوباما وکھری ٹائپ ملاقات؟

(میاں نواز شریف کو دورہِ امریکہ سے پہلے ہی بنیادی بریفنگ میں بتا دیا گیا تھا کہ اوباما کی والدہ این ڈنہم ایشین ڈویلپمنٹ بینک کے مشیر کے طور پر اسّی کی دہائی میں ایک سال گوجرانوالہ میں مقیم رہی ہیں اور اوباما بھی زمانہِ طالبِ علمی میں کراچی اور لاہور میں اپنے پاکستانی دوستوں کے ساتھ وقت گزار چکے ہیں۔ اس پس منظر میں وائٹ ہاؤس کے اوول آفس میں نوے منٹ کی شریف اوباما بالمشافہ ملاقات کا احوال بتا رہے ہیں وسعت اللہ خان

شریف: اسلام و علیکم مسٹر پریزیڈنٹ

اوباما: جی آیاں نوں پہلوان ۔کداں؟

شریف: آپ سے مل کے انتہائی مسرت ہو رہی ہے۔ اس ملاقات کا کوئی ٹھوس نتیجہ برآمد ہو نہ ہو لیکن آپ کے ساتھ تصویر میرے لیے نہایت قیمتی ہوگی۔

اوباما : بہت شکریہ ۔ایک گل کہواں برا نہ مناؤنا۔یا تے میرے نال انگلش چے گل کرو یا پنجابی وچ یا فیر اسان اردو وچ۔ مسرت ہو رہی ہے، ٹھوس نتیجہ برآمد ہوگا، نہایت قیمتی ہوگی ۔ایسے مشکل جملے مینوں پلے نئیں پیندے۔ کی سمجھے؟

شریف : جی تے میرا وی کردا اے کہ پنجابی وچ دل دا حال سناواں پر کج سیاسی تے علاقائی مجبوریاں نیں۔تسی تے ماشاللہ سیانے بیانے بندے او۔میری گل سمجھ گئے ہوگے۔

اوباما : چلو ٹھیک اے۔ اے دسو پشلے تن چار دن کیسے لنگھے؟

شریف: الحمداللہ بہت آؤ بھگت ہوئی۔ پہلے دن کیری صاحب نے فون کر کے پوچھا کہ آپ ملنے آرہے ہیں یا میں زحمت کروں۔ میں نے کہا کہ حضور مجھے آپ کی مصروفیات کا اندازہ ہے۔ میں خود ہی اسحاقے اور بھائی سرتاج کے ساتھ چلا آتا ہوں۔ پھر کیری صاحب نے ازراہِ عنایت پوچھا کہ ٹیکسی بھجوا دوں۔ میں نے ان کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ جی نہیں میرا سفارتخانہ اچھی طرح خیال رکھ رہا ہے۔ کیری صاحب سے چائے بسکٹ پر بہت اچھی ملاقات رہی۔انہوں نے سٹیٹ ڈپارٹمنٹ کی سیر بھی کروائی اور نچلے عملے سے بھی ملوایا۔ بار بار معذرت بھی کرتے رہے کہ مجھے خود چل کے سٹیٹ ڈپارٹمنٹ آنا پڑا۔ بہت ملنسار آدمی ہیں کیری صاحب، بالکل ڈاؤن تو ارتھ یو نو ۔۔اس کے بعد نائب صدر جو بائیڈن صاحب سے۔۔۔

اوباما: ہاں میں ایہی پچھن لگا ساں کہ بائڈن نے ناشتہ کیسا کرایا۔میں اونہوں خاص طور تے کیہا سی کہ میاں صاحب نوں کوئی شکیت نئیں ہونی چاہیدی اے۔۔۔۔۔۔

شریف: بائڈن صاحب نے تو ہم لاہوریوں کو بھی میزبانی میں پیچھے چھوڑ دیا۔ خود بچارے ایک سلائس، ابلے ہوئے انڈے اور چائے تک رہے لیکن مہمانوں کے لیے قیمے کے پراٹھے، ہریسہ، کھد، تیتر، مغز، شہد، دس طرح کی چٹنیاں، تین چار قسم کے آملیٹ ۔میں تو حیران ہوں کہ بھنے ہوئے چڑے بھی میز پر تھے۔

اوباما: چلو خوشی ہوئی کہ تسی وی کسے توں راضی ہوئے۔دراصل اے خانساماں والدہ صاحبہ گوجرانوالے تو نال لیائے سن۔ جدوں او فوت ہوئے تے میں اینہوں رکھ لیا۔ ہن تے مشل نوں وی اونہیں پاکستانی کھابیاں تے لا دتا اے۔ میں آپ چڑے بڑے شونق نال کھاناں واں۔۔۔اچھا اے تسی اپنے بوجے چوں کاغذ کیوں کڈ رئے او خیر تے ہے؟

شریف: میں نے سوچا کیوں نہ موقع کا فائدہ اٹھا کر کچھ عرض کردوں ۔ پاکستان سے چلتے وقت یہ کچھ نوٹس بنائے تھے تاکہ آپ کا قیمتی وقت ضائع نہ ہو۔

اوباما: دسو۔۔۔۔چنگی پلی کھابیاں دی گل چل رئی سی، تسی اے کاغذ کڈھ بیٹھے۔ خیر دسو میں کی مدد کر سکنا واں۔ جیہڑے بقایا پیسے سن او تے میں لوٹان دا آرڈر جاری کردتا اے۔ سلانہ امداد وی بحال ہوجائے گی۔ ہور پیسے نہ منگ بیٹھنا۔ اج کل کانگریس بالکل پوتھری ہوئی اے۔ سانوں تے اپنے ملازماں نوں پشلے مہینے دی تنخواواں دین دے لالے پئے ہوئے نیں۔گھر دا راشن وی مشل ادھار تے منگوا رئی اے۔

شریف : جی آپ بالکل فکر مند نہ ہوں ۔اس کاغذ میں روپے پیسے کا کوئی ذکر نہیں۔ یہ تو سراسر سیاسی فہرست ہے۔

اوباما: دیخ میرا ویر۔۔ مینوں پتہ اے کہ اس لسٹ وچ کی کی ہوسکدا اے۔ صرف امی جی نئیں میں وی پاکستان وچ تھوڑا بہت ٹیم ہنڈایا اے۔ کشمیر تے اسی کج وی نہیں کر سکدے۔اونہاں دا مسلہ ممبئی تماکے تے جماعت الدعوہ اے تو تہاڈا مسلہ کشمیر۔ تسی دوویں آپے ای نبڑو۔ ساڈی ہور بیستی نا کراؤ پائی جی۔

شریف: اچھا تو پھر عافیہ پر بات کر لیتے ہیں۔

اوباما: چلو تسی عافیہ تے گل کرو میں شکیل آفریدی تے شروع کرنا واں۔ فیر چنگے رہو گے۔۔۔

شریف: تو پھر آپ ہی بتائیے کہ ہم کیا بات کریں؟

اوباما: افغانستان تے گل کرو۔اپنے طالبان تے گل کرو ۔بلوچستان تے کرو۔لوڈ شیڈنگ تے کرو۔انویسٹمنٹ تے گل کرو۔۔۔بتہیرے ٹاپک نیں گل کرن دے۔۔۔ضروری اے کے۔۔۔۔

شریف: افغانستان کے بارے میں ہماری پالیسی غیر جانبدارانہ ہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ امریکی اور نیٹو افواج کا انخلا محفوظ طریقے سے ہو۔ بلوچستان ہمارا اندرونی معاملہ ہے مگر بیرونی طاقتیں وہاں حالات خراب کرنے پر تلی بیٹھی ہیں۔ طالبان سے بات چیت میں ہم بالکل سنجیدہ ہیں لیکن فریقِ ثانی کی سنجیدگی پر سوالیہ نشان ہے۔ لوڈشیڈنگ کا مسئلہ انشااللہ دو ہزار بیس تک قابو میں آجائے گا۔اس سلسلے میں امریکی سرمایہ کاری کو ہم ہمیشہ کی طرح خوش آمدید کہیں گے۔۔۔اور اگر ایران پاکستان گیس پائپ لائن۔۔۔

اوباما: او گیس توں یاد آیا کہ توقیر صادق دا کی حال اے۔ اونہوں سزا دے وی رئے او کہ نئیں؟ ایتھے امریکہ وچ وی سوئی گیس بڑی مہنگی ہوگئی اے۔بہرحال اللہ وارث اے۔۔۔

شریف: بہرحال ۔۔۔میں یہ کہہ رہا تھا کہ اور کچھ نہیں تو کم ازکم ڈرون حملے ہی بند ۔۔۔۔۔۔۔

اوباما: اچھا جی۔۔۔۔بڑی خوشی ہوئی تہانوں مل کے۔ مینوں اجازت دوو۔ بچیاں دی سکول دی چھٹی دا ٹیم ہوگیا اے۔۔۔۔میں خانسامے نوں کہہ کے جاواں گا کہ تہاڈا خیال رکھے۔۔اوہدے ہتھ دی چا ضرور پی کے جاناں۔۔۔گوجرانوالے دے طفیلے پیپسی دی چا پل جاؤ گے۔۔۔۔کوئی ہور گل رہ گئی ہووے تو اس خادم نوں پاکستان پونچدے نال ای میل کر دینا۔۔۔بے فکر ہو کے واپس جاؤ۔۔۔۔۔۔رب راکھا۔۔

شریف: سنیے۔۔۔میں یہ کہہ رہا تھا کہ اگر آپ پاکستان کے دورے پر تشریف لائیں تو پوری قوم کو نہایت مسرت ہوگی۔

اوباما : مجھے بھی نہایت مسرت ہوگی جے تسی کدی شمالی وزیرستان دا دورہ کر لئو ۔۔۔ہن رب راکھا۔

اسی بارے میں