سرتاج عزیز دہلی میں، سلمان خورشید سے ملاقات کریں گے

Image caption سرتاج عزیز دہلی میں یورپ اور ایشیائی ممالک کے اجلاس میں شرکت کے لیے دہلی پہنچے ہیں

پاکستان کے مشیر خارجہ سرتاج عزیر یورپی اور ایشیائی ممالک کے وزرائے خارجہ کے اجلاس میں شرکت کے لیے بھارت کےدارالحکومت دلی پہنچ گئے ہیں جہاں وہ وزیر خارجہ سلمان خورشید سے بھی ملاقات کریں گے۔

بھارتی وزارت خارجہ کے ترجمان سید اکبر الدین کے مطابق بات چیت میں لائن آف کنٹرول پر جاری کشیدگی پر بھی تبادلہ خیال کیا جائے گا جسے کم کرنے کے لیے دونوں ممالک کے وزرائے اعظم نے ڈائریکٹر جنرل ملٹری آپریشنز کی سطح پر بات چیت کی تجویز پر اتفاق کیا تھا لیکن تقریباً ڈیڑھ مہینہ گزر جانے کے باوجود یہ سلسلہ ابھی شروع نہیں ہو سکا ہے۔

پاکستان ہائی کمیشن کے مطابق سرتاج عزیز اور سلمان خورشید کی ملاقات بارہ نومبر کو ہوگی۔

پاکستان کے وزیر اعظم نواز شریف اور اور ان کے بھارتی ہم منصب من موہن سنگھ نے نیو یارک میں انتیس ستمبر کو اپنی پہلی باہمی ملاقات میں اس بات پر اتفاق کیا تھا کہ لائن آف کنٹرول پر جنگ بندی کے معاہدے کی خلاف ورزی روکنے اور کشیدگی کم کرنے کی ضرورت ہے جس کے لیے دونوں ممالک کی فوجوں کے ڈائریکٹر جنرل آف ملٹری آپریشنز ایک طریقہ کار وضع کریں گے۔

دونوں وزرائے اعظم کا خیال تھا کہ ایل او سی پر کشیدگی کم کرنے کے بعد ہی باہمی مذاکرات کے عمل کو آگے بڑھایا جاسکتا ہے۔

اکبرالدین کے مطابق دونوں رہنما اس بات کا جائزہ لیں گے کہ وزرائے اعظم کی ملاقات کے بعد صورتحال کو بہتر بنانے میں کتنی پیش رفت ہوئی ہے۔

ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ آیا من موہن سنگھ بھی سرتاج عزیز سے ملاقات کریں گے یا نہیں۔

پاکستان ہائی کمیشن کی دعوت پر حریت کانفرنس کے رہنما میر واعظ عمر فاروق اور تحریک سے وابستہ دیگر سرکردہ رہنما بھی دلی میں ہیں۔ وہ اتوار کی شام پاکستان ہائی کمیشن میں سرتاج عزیز سے ملاقات کریں گے۔

کشمیر کی علیحدگی پسند قیادت سے ملاقات روایتاً دہلی آنے والے کسی بھی سرکردہ پاکستانی سیاسی رہنما کے پروگرام میں شامل ہوتی ہے جس کا بظاہر مقصد یہ پیغام دینا ہے کہ مسئلۂ کشمیر کے حل اور اس عمل میں کشمیری قیادت کی شمولیت کو سرد خانے میں نہیں رکھا گیا ہے۔

ایشایا اور یورپی ممالک (اے ایس ای ایم) کے وزرائے خارجہ کا اجلاس گیارہ اور بارہ نومبر کو دہلی میں ہوگا جس میں ترقی کو فروغ دینے کے طریقوں پر غیر رسمی مذاکرات کیے جائیں گے۔