وزیراعظم یقینی بنائیں کہ اب کوئی جبری گمشدگی نہ ہو: سپریم کورٹ

Image caption ایجنسیوں کے پاس لوگوں کو غیر قانونی طور پر اپنی حراست میں رکھنے کا اختیار نہیں: چیف جسٹس

پاکستان کی سپریم کورٹ نے وزیرِاعظم پاکستان اور خیبر پختونخوا کے وزیرِاعلیٰ اور گورنر کو 35 لاپتہ افراد کی بازیابی کے لیے ایک ہفتے کی مہلت دی ہے۔

ملاکنڈ کے حراستی مرکز سے لاپتہ ہونے والے 35 افراد کے مقدمے کا فیصلہ سناتے ہوئے سپریم کورٹ کا کہنا تھا کہ ملک میں غیر اعلانیہ حراست کا کوئی قانون موجود نہیں ہے اور حکومت جبری گمشدگیاں روکنے سے متعلق قانون سازی کرے۔

’وزیرِاعظم چاہیں تو لاپتہ افراد کا معاملہ حل ہو سکتا ہے‘

’لگتا ہے رہا کیے گئے لاپتہ افراد فوج کا اثاثہ ہیں‘

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ لاپتہ افراد کیس سے متعلق سپریم کورٹ کے حکم پر عمل نہیں کیا گیا اور 35 میں سے اب تک صرف 7 افراد کو پیش کیا گیا ہے اور بقیہ افراد کی بازیابی سے متعلق عدالت کو آگاہ کیا جائے۔

عدالت نے 35 لاپتہ افراد کو حراست میں رکھنے کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے کہا کہ بادی النظر میں یہ نتیجہ اخذ کیا جاتا ہے کہ ان افراد کی حراست خفیہ تھی۔

نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق عدالتی حکم میں کہا گیا ہے کہ ایجنسیوں کے پاس لوگوں کو غیر قانونی طور پر اپنی حراست میں رکھنے کا اختیار نہیں ہے اور صرف پولیس کو یہ اختیار حاصل ہے کہ وہ کسی شخص کو شک کی بنیاد پر حراست میں لیں۔ ’دیگر ادارے ایسا نہیں کر سکتے۔‘

Image caption جن 14 افراد کو عدالت کے سامنے پیش کیا گیا ان میں سے7 دراصل لاپتہ افراد کے رشتہ دار تھے

عدالت کا یہ بھی کہنا تھا کہ جو ادارے یا سکیورٹی اہلکار ان افراد کو زیرِ حراست رکھنے یا اغوا کرنے میں ملوث ہیں ان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے۔

عدالت نے وزیراعظم کو ہدایت کی ہے کہ وہ مستقبل میں اس بات کو یقینی بنائیں کہ کسی ادارے کی جانب سے افراد کو جبر ی طور پر حراست میں نہ رکھا جائے ۔

سماعت کے دوران چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ ان لاپتہ افراد سے متعلق وزارت دفاع کی وضاحتوں پر یقین کرنا مشکل ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ اس مقدمے کی سماعت کے دوران ایڈیشنل سیکریٹری دفاع پہلے تو ان افراد کی سکیورٹی اداروں کی تحویل میں ہونے سے انکار کرتے رہے اور پھر وقت گُزرنے کے ساتھ ساتھ کچھ افراد کو عدالت میں پیش بھی کیا گیا۔

اُنہوں نے کہا کہ اس مقدمے کی سماعت سے یہ نتیجہ اخذ کیا جا سکتا ہے کہ ملاکنڈ کے حراستی مرکز سے 35 افراد کو فوجی اہلکار اپنے ساتھ لے گئے تھے۔

Image caption وزیرِاعظم چاہیں تو لاپتہ افراد کا معاملہ حل ہو سکتا ہے: چیف جسٹس

اپنے فیصلے میں سپریم کورٹ نے اٹارنی جنرل کے موقف کو مسترد کر دیا ہے جس میں کہا گیا تھا کہ صوبہ خیبر پختونخوا کے جنگ زدہ علاقوں میں فوج کو فوجداری مقدمات کی سماعت کرنے کا اختیار ہے۔

دوسری جانب سپریم کورٹ نے اڈیالہ جیل سے رہائی کے بعد جبری طور پر گمشدہ ہونے والے گیارہ قیدیوں سے متعلق مقدمے کا فیصلہ بھی سنا دیا ہے جس میں حکومت کو اُن چار قیدیوں کے لواحقین کو معاوضہ ادا کرنے کا حکم دیا ہے جو اس عرصے کے دوران ہلاک ہوگئے تھے جبکہ زیر حراست دیگر 7 قیدیوں کی ان کے رشتہ داروں سے ملاقات کروانے کا بھی حکم دیا ہے۔

یاد رہے کہ سنہ 2010 میں گیارہ افراد کو اُس وقت اڈیالہ جیل کے باہر سے سکیورٹی اداروں کے اہلکار زبردستی اپنے ساتھ لے گئے تھے جب انسداد دہشت گردی کی متعلقہ عدالت نے عدم ثبوت کی بنا پر ان افراد کو رہا کرنے کا حکم دیا تھا۔

اسی بارے میں