کراچی: تحریک طالبان کا اہم رکن ہلاک

Image caption پولیس کا دعویٰ ہے کہ گرفتار ہونے والا ملزم امیر حمزہ خود کش جیکٹیں، حملوں کے لیے استعمال ہونے والی بارود سے بھری گاڑیاں تیار کر سکتا ہے

پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی میں پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے والی ٹیم پر حملے کے منصوبے پر عمل درآمد کرنے والا کالعدم تحریک طالبان پاکستان کا ایک اہم رکن ہلاک، ایک گرفتار جب کہ دو فرار ہوگئے۔

تھانہ سہراب گوٹھ انڈسٹریل ایریا کے سٹیشن ہاؤس آفیسر (ایس ایچ او) شیخ شعیب علی کے مطابق پولیس کو منگل کے روز اطلاع ملی تھی کہ شہر میں پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے والی ٹیم کے ارکان پر حملہ کیا جائےگا جس کے بعد پولیس کو پہلے ہی چوکس کر دیا گیا تھا۔

ایس ایچ او کے مطابق منگل کو احسان آباد کے علاقے میں پولیس نے دو موٹر سائیکلوں پر سوار چار مسلح مشکوک افراد کو پولیو کی ٹیم کی جانب جاتے ہوئے روکنے کی کوشش کی لیکن وہ نہ رکے اور فائرنگ کر دی۔

شیخ شعیب علی نے بی بی سی کو بتایا کہ پولیس کی جوابی فائرنگ سے موٹر سائیکلوں پر سوار کالعدم تحریک طالبان پاکستان کا ایک رکن دوان اللہ عرف مصباح ہلاک جب کہ جنجال گوٹھ میں کالعدم تحریک طالبان پاکستان کا رہنما حمزہ نامی شخص کو گرفتار کر لیا گیا۔

پولیس کا دعویٰ ہے کہ گرفتار ہونے والا ملزم امیر حمزہ خود کش جیکٹیں، حملوں کے لیے استعمال ہونے والی بارود سے بھری گاڑیاں تیار کر سکتا ہے۔

پولیس کے مطابق اس مقابلےکے دوران دو مشتبہ افراد فرار ہو گئے جبکہ ہلاک ہونے والے ملزم کی لاش کراچی کے جناح ہسپتال لائی گئی۔

کراچی میں صرف تین روز قبل سی آئی ڈی پولیس نے ویسٹ وہارف کے علاقے میں چھاپہ مار کر ایک مطلوب ملزم محمد عدنان عرف ابو حمزہ کو گرفتار کیا تھا۔

سی آئی ڈی پولیس کے شعبۂ تفتیش کے سربراہ مظہر مشوانی نے دعویٰ کہ تھا کہ یہ ملزم پاکستان میں تحریکِ طالبان پاکستان کے لیے کام کر رہا تھا اور مطلوب ملزمان کی جاری شدہ فہرست یعنی ریڈ بک میں اس کا نمبر 36 واں ہے۔

کراچی میں گذشتہ کئی سالوں سے امن و امان کی صورتِ حال خراب ہے اور رواں سال ستمبر میں وفاقی کابینہ کے خصوصی اجلاس میں شہر میں رینجرز کی سربراہی میں ٹارگٹڈ آپریشن کا فیصلہ کیا گیا تھا۔

یہ آپریشن تاحال جاری ہے اور اس دوران چھاپوں میں سینکڑوں افراد کو گرفتار کرنے کا دعویٰ کیا جا چکا ہے۔

اسی بارے میں