بلاول ہاؤس کی دیوار کی جھڑپ سڑک سے ٹوئٹر پر

Image caption دونوں سیاسی جماعتوں کے کارکنان کے درمیان جھڑپ میں کئی کارکن زخمی ہوئے ہیں

پاکستان کے صوبہ سندھ کے شہر کراچی میں پاکستان تحریک انصاف کے کارکنوں کی جانب سے بلاول ہاؤس کی دیواریں گرانے کے مطالبے پر پیپلز پارٹی اور پی ٹی آئی کے کارکنوں کے درمیان جھڑپیں ہوئی ہیں۔

اس جھڑپ کے بعد دونوں جماعتوں کے قائدین کے درمیان سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جھڑپیں شروع ہو گئیں۔ اور ٹوئٹر پر بلاول ہاؤس وال (bilawalhousewall) کا ہیش ٹیگ ٹرینڈ کر رہا ہے۔

یہ جھڑپیں کلفٹن کے علاقے بوٹ بیسن میں ہوئیں جہاں پیپلز پارٹی کے کارکنوں نے پی ٹی آئی کے جلوس کو روکنے کی کوشش کی۔

ان جھڑپوں کے بعد پولیس کی جانب سے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے لاٹھی چارج کیا گیا اور آنسو گیس کا استعمال بھی کیا گیا۔

واضح رہے کہ پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے بلاول ہاؤس کی دیواریں گرانے اور اطراف کی سڑکوں کو بلاک کرنے کے سندھ ہائی کورٹ کے فیصلے پر عمل درآمد نہ ہونے کے خلاف بوٹ بیسن پر مظاہرہ کیا گیا۔

پاکستان تحریک انصاف کے کارکنان کا مطالبہ تھا کہ بلاول ہاؤس کے اطراف میں غیر قانونی دیواریں گرائی جائیں۔

دونوں سیاسی جماعتوں کے کارکنان کے درمیان جھڑپ میں کئی کارکن زخمی ہوئے ہیں۔

پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین بلاول بھٹو نے ٹی ٹی پی ٹی آئی کے ہیش ٹیگ کے ساتھ ٹوئٹ کی ’دہشت گردوں کا جو یار ہے، غدار ہے غدار ہے۔‘

ایک اور ٹوئٹ میں بلاول بھٹو نے کہا ’پی ٹی آئی کے کارکنان لاٹھیاں اور اسلحہ ساتھ لائے تھے اور انہوں نے پی پی کے جیالوں پر حملہ کیا۔ جو کارکن شہید محترمہ بینظیر بھٹو کو بچانے کے لیے خود کو بموں کے سامنے لے آتے تھے وہ جینز میں منی طالبان سے نہیں ڈرتے۔ پی ٹی آئی بلاول ہاؤس کی دیواریں ہٹانا چاہتی ہے تاکہ طالبان مجھے مار سکیں۔‘

بلاول کی بہن آصفہ بھٹو نے ٹوئٹ میں لکھا کہ بنی گالا میں عمران خان کے مکان کی جانب جانے والی سڑک آمد و رفت کے لیے بند ہے اور پی ٹی آئی والے اس سڑک کو انصاف ایونیو کے نام سے پکارتے ہیں۔

دوسری جانب پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا ’بہت شرمناک بات ہے کہ جاگیردارانہ سوچ اور وراثتی سیاسی جماعتیں اپنے رہنماؤں کو اس بات کی اجازت دیتے ہیں کہ وہ سرکاری املاک کو ذاتی ضروریات کے لیے استعمال کریں۔‘

دوسری جانب پی ٹی آئی کی ترجمان شیریں مزاری کی جانب سے پی ٹی آئی کے ٹوئٹر اکاؤنٹ سے ٹوئٹ کی گئی ہے جس میں انہوں نے کہا ہے ’وقت آ گیا ہے کہ بلاول بھٹو زرداری بلٹ پروف شیشے اور غیر قانونی دیوار کے پیچے سے شکایت کرنا بند کریں اور سیاسی طور پر بڑے ہو جائیں۔‘

اسی بارے میں