عمران فاروق قتل:’سچ جلد عوام کے سامنے آئے گا‘

تصویر کے کاپی رائٹ PID

لندن میں متحدہ قومی موومنٹ کے سابق رہنما ڈاکٹر عمران فاروق کے قتل کی تحقیقات سے متعلق پاکستان کے وزیر داخلہ چوھدری نثار علی خان نے کہا ہے کہ ’سچ بہت جلد عوام کے سامنے آجائے گا۔‘

یہ بات وزیر داخلہ نے اس سوال کے جواب میں کہی کہ ڈاکٹر عمران فاروق کے قتل میں مطلوب دو پاکستانی کہاں ہیں۔

جمعرات کو اسلام آباد میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر داخلہ نے کہا ’لگ بھگ چھ ماہ پہلے برطانوی حکومت نے پاکستان سے باقاعدہ قانونی معاونت کی درخواست کی تھی مگر اسے بہت جلد ہی واپس لے لیا گیا۔‘

انہوں نے مزید کہا کہ ’چندہفتے پہلے برطانوی حکومت نے پھر پاکستان سے مدد کی درخواست کی ہے جس کے جواب میں ہم نے انہیں بتایا ہے کہ حکومت اس درخواست کا قانونی اور سیاسی جائزہ لینے کے بعد بہت جلد انہیں اور عوام کو جواب دے گی۔‘

خیال رہے تقریبا دو ہفتے پہلے بی بی سی کے پروگرام ’نیوز نائیٹ‘ کی رپورٹ میں پہلی مرتبہ ڈاکٹر عمران فاروق قتل کیس میں دو پاکستانیوں کو بھی شناخت کیاگیا جو مبینہ طور قتل کی ورادات کے بعد اسی شام ہیتھرو ایئرپورٹ سے سری لنکا پرواز کر گئے تھے اور اطلاعات کے مطابق انھیں سری لنکا سے کراچی پہنچنے پر ہوائی اڈے کے رن وے پرگرفتار کیا گیا تھا۔

چند ہفتے پہلے ہی لندن میں میٹروپولیٹن پولیس نے متحدہ قومی موومنٹ کے کئی بینک اکاونٹ بند کرتے ہوئے ٹیکس نہ دینے کے الزمات کے تحت تحقیقات کاآغاز کیاہے۔

متحدہ کے خلاف ڈاکٹر عمران فاروق کے قتل اور منی لانڈرنگ کے الزامات پہلے ہی زیرِ تفتیش ہیں۔

دریں اثنا برطانوی کراؤن پراسیکیوشن سروس نے باضابطہ طور پر پاکستانی حکام سے ان دو افراد کی تلاش کا کہا ہے جو مبینہ طور پر ڈاکٹر عمران فاروق کے قتل میں برطانیہ کو مطلوب ہیں۔

ایم کیو ایم ان تمام الزامات سے انکار کرتی ہے لیکن الطاف حسین اپنے ایک ٹیلی فونک خطاب میں کہہ چکے ہیں کہ لندن پولیس نے ان کا جینا حرام کر رکھا ہے۔ الطاف حسین نے یہ بھی کہا ہے کہ اگر انھیں گرفتار کیا گیا تو کارکن یاد رکھیں کہ ان کا قائد بےگناہ تھا اور بےگناہ ہے۔

نیوزنائیٹ میں دکھائی جانے والی دستاویزی فلم سے متعلق متحدہ قومی موومنٹ نے برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون کو اختجاجی خط بھی بھیج رکھا ہے۔

خط میں کہا گیا ہے کہ بی بی سی نے الطاف حسین اور ایم کیوایم کے خلاف بددیانتی پر مبنی دستاویزی فلم نشر کی ہے جس سے عوام کے جذبات مجروح ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں