کراچی: اے این پی کے رکن سمیت 4 ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption پولیس کا کہنا ہے کہ عوامی نیشنل پارٹی کالعدم شدت پسند تنظیموں کے نشانے پر ہیں، واقعہ اسی کا تسلسل لگتا ہے۔

کراچی میں فائرنگ کے ایک واقعے میں عوامی نیشنل پارٹی کے مقامی عہدیدار سمیت چار افراد ہلاک جبکہ دو زخمی ہوگئے ہیں۔

اورنگی ایم پی آر کالونی کے قریب یہ واقعہ پیش آیا ہے۔ ایس ایس پی عرفان بلوچ کا کہنا ہے کہ عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما ڈاکٹر اسرار کار میں سوار تھے جن پر موٹر سائیکل سوار مسلح افراد نے فائرنگ کی ہے۔

فائرنگ کے نتیجے میں ڈاکٹر اسرار سمیت چار افراد موقعے پر ہلاک ہوگئے جبکہ دو افراد زخمی ہوئے ہیں جنہیں عباسی شہید ہسپتال منتقل کیا گیا ہے۔

ایس ایس پی عرفان بلوچ نے شبہہ ظاہر کیا ہے کہ عوامی نیشنل پارٹی کالعدم شدت پسند تنظیموں کے نشانے پر ہے۔

دوسری جانب عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکریٹری بشیر جان کا کہنا ہے کہ اس واقعے میں ان کے چار ساتھی، ڈاکٹر اسرار اللہ، جمشید، جاوید اور رمز اللہ ہلاک ہوئے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ دو روز پہلے ڈاکٹر اسرار کو کالعدم تحریک طالبان سواتی گروپ کی جانب سے دس سے پندرہ لاکھ روپے چندے کی پرچیاں ملی تھیں جس کی مہلت آج جمعرات تک کی تھی۔

یاد رہے کہ کالعدم تحریک طالبان نے انتخابات کے دوران عوامی نیشنل پارٹی کو نشانہ بنانے کا اعلان کیا تھا جس کے دوران لانڈھی میں قومی اسمبلی کے ایک امیدوار ساجد کو قتل کیاگیا۔

صوبائی جنرل سیکرٹری بشیر جان کی کارنر میٹنگ میں دھماکہ کیاگیا اور انتخابات کے دن بھی یہ سلسلہ جاری رہا۔ بشیر جان کے مطابق انتخابات کے دو ماہ کے دوران ان کے 39 ساتھیوں اور ہمدردوں کو ہلاک کیا گیا تھا۔

کراچی میں گزشتہ سات ماہ سے ٹارگٹڈ آپریشن جاری ہے، عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما بشیر جان کہتے ہیں کہ انہیں اس آپریشن سے کوئی ریلیف نہیں پہنچا، ان کے کارکنوں اور ہمدردوں کو اسی طرح نشانہ بنایا جا رہا ہے اور چندے کی پرچیاں دی جا رہی ہیں۔

دوسری جانب نیو ایم اے جناح روڈ پر واقع ایک مدرسے کے باہر کریکر دھماکہ کیا گیا ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ واقعے میں دو طالب علم زخمی ہوگئے ہیں۔

اسی بارے میں