’عصمت اللہ کی ہلاکت، خفیہ اداروں کی کارستانی‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption عصمت اللہ شاہین کی ہلاکت گاڑی پر فائرنگ کے نتیجے میں ہوئی

کالعدم شدت پسند تنظیم تحریک طالبان پاکستان نے تنظیم کے سرکردہ رکن عصمت اللہ شاہین کی ہلاکت کی تصدیق کرتے ہوئے اس کی ذمہ داری پاکستان کے خفیہ اداروں پر عائد کی ہے۔

تحریک طالبان پاکستان کی طرف سے جاری ہونے والےبیان میں اس بات کا اعتراف کیا گیا ہے کہ عصمت اللہ شاہین کی ہلاکت سے تنظیم کو ناقابلِ تلافی نقصان پہنچا ہے۔

طالبان کے بیان میں دھمکی آمیز لہجہ اختیار کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ امریکی خفیہ ادارے سی آئی اے اور پاکستان کے خفیہ ادارے آئی ایس آئی نے ڈرون حملوں کی جگہ ایک متبادل حکمت عملی اختیار کر لی ہےْ۔ انھوں نے کہا کہ اس خطرناک پروگرام پر ان کی نظر ہے۔

یاد رہے کہ تنظیم کے سرکردہ رکن عصمت اللہ شاہین دو روز قبل شمالی وزیرستان میں فائرنگ کے ایک واقعے میں ہلاک ہو گئے تھے۔

عصمت اللہ شاہین کی ہلاکت پر جاری ہونے والے اس بیان میں حکومت اور تنظیم کے درمیان مذاکرات کے بارے میں کچھ نہیں کہا گیا۔

حکومتِ پاکستان کا کہنا ہے کہ جب تک طالبان کی طرف سے دہشت گردی ختم نہیں ہوتی مذاکرات کے عمل کو آگے نہیں بڑھایا جائے گا۔

اسی بارے میں