وزیرستان میں فضائی کارروائیاں موثر رہی ہیں: سرتاج عزیز

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ’سعودی عرب دنیا بھر سے ہتھیار خرید رہا ہے اور میرا نہیں خیال کہ وہ ہمارے ہتھیار خریدیں گے کیونکہ ہمارے ہتھیار اتنے اچھے نہیں ہیں‘

وزیر اعظم پاکستان میاں محمد نواز شریف کے مشیر برائے خارجہ امور سرتاج عزیز نے کہا ہے کہ وزیرستان ایجنسی میں طالبان کے خلاف فضائی کارروائیاں اب تک بہت موثر ثابت ہوئی ہیں۔

سرتاج عزیز نے یہ بات بدھ کو اسلام آباد میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے کہا کہ کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان کے ساتھ مذاکرات زیادہ مفید ثابت نہیں ہوئے۔

انہوں نے کہا کہ ’ابھی تک کی اطلاعات کے مطابق وزیرستان میں شدت پسندوں کے خلاف فضائی کارروائی کافی موثر رہی ہے۔‘

سرتاج عزیز نے ایک بار پھر سعودی عرب کی جانب سے شام کے باغیوں کے لیے پاکستانی ہتھیار دیے جانے کی تردید کی۔ انہوں نے کہا کہ شام کے باغیوں کو ہتھیار دینے والی خبریں بالکل بے بنیاد ہیں۔

انہوں نے کہا: ’سعودی عرب دنیا بھر سے ہتھیار خرید رہا ہے اور میرا نہیں خیال کہ وہ ہمارے ہتھیار خریدیں گے کیونکہ ہمارے ہتھیار اتنے اچھے نہیں ہیں۔‘

سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق سرتاج عزیز نے کہا کہ آئندہ دو ہفتوں میں دفاعی اور خارجہ پالیسی کا بھی اعلان کیا جائے گا۔

واضح رہے کہ منگل کی شام بّری فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف نے وزیر اعظم سے ملاقات کی۔

سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق آرمی چیف اور وزیر اعظم نے دفاع اور قومی سلامتی کے امور پر بات چیت کی۔

اس ملاقات میں وزیر دفاع خواجہ آصف، وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان، ڈی جی آئی ایس آئی لیفٹیننٹ جنرل ظہیر الاسلام اور ڈی جی ملٹری آپریشنز عامر ریاض بھی موجود تھے۔

اسی بارے میں