خیبر ایجنسی: شلوبر میں جھڑپ، تین شدت پسند ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption باڑہ سب ڈویژن کے علاقوں میں پچھلے کئی برسوں سے سکیورٹی فورسز کی کاروائیاں جاری ہیں

پاکستان کے قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں حکام کا کہنا ہے کہ سکیورٹی فورسز اور شدت پسندوں کے درمیان ہونے والی ایک جھڑپ میں تین شدت پسند ہلاک ہوگئے ہیں۔

حکام کے مطابق اس واقعے میں تین سکیورٹی اہلکار بھی زخمی ہوئے ہیں۔

خیبر ایجنسی کی مقامی انتظامیہ کے ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ جھڑپ جمعرات اور جمعے کی درمیان شب باڑہ بازار سے تقریباً چار کلومیٹر دور شلوبر کے علاقے میں ہوئی۔

انہوں نے کہا کہ سکیورٹی فورسز کے اہلکار گشت کررہے تھے کہ اس دوران شدت پسندوں نے ان پر فائرنگ کی جس سے تین اہلکار زخمی ہو گئے۔

اہلکار نے بتایا کہ سکیورٹی فورسز نے بھی جوابی کارروائی کی جس میں تین شدت پسند مارے گئے۔

مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ مرنے والے شدت پسندوں کا تعلق کالعدم تنظیم لشکر اسلام سے ہے۔

خیال رہے کہ باڑہ سب ڈویژن کے علاقوں میں پچھلے کئی برسوں سے سکیورٹی فورسز کی غیر اعلانیہ کارروائیاں جاری ہیں جس کی وجہ سے علاقے میں گذشتہ کچھ عرصہ سے دہشت گردی کے واقعات میں بھی کمی واقع ہوئی ہے۔

تاہم ان کارروائیوں کی وجہ سے علاقے میں بدستور خوف و ہراس کی کفیت پائی جاتی ہے اور ہزاروں افراد نے محفوظ مقامات کی طرف نقل مکانی کی ہے جو بدستور پناہ گزین کیمپوں میں مقیم ہیں۔

یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ گذشتہ چند دنوں کے دوران خیبر ایجنسی کے علاقوں میں دو مرتبہ سکیورٹی فورسز کی جانب سے شدت پسندوں کے ٹھکانوں پر فضائی حملے کیے گئے ہیں۔

اسی بارے میں