دفاع کے لیے درکار وسائل کی فراہمی کو یقینی بنائیں گے: اسحاق ڈار

تصویر کے کاپی رائٹ AFP Getty
Image caption رواں مالی سال میں 627ارب روپے دفاع کے لیے رکھے گئے تھے

پاکستان کے وزیرِ خزانہ اسحاق ڈار نے پاکستانی فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف کو یقین دہانی کروائی ہے کہ ملک کے دفاع کے لیے درکار وسائل کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق وزیر خزانہ اور آرمی چیف کے درمیان ملاقات میں آئندہ مالی سال دفاعی بجٹ کی ضروریات پر تفصیلی بات چیت ہوئی۔

وزارت خزانہ کی طرف سے جاری بیان کے مطابق وزیر خزانہ نے آرمی چیف کو یقین دلایا کہ ملک کی سکیورٹی کی صورتحال کے پیش نظر دفاعی بجٹ کے لیے تمام ضروری وسائل فراہم کیے جائیں گے۔

رواں مالی سال میں 627ارب روپے دفاع کے لیے رکھے گئے تھے۔

پاکستان مسلم لیگ نون کی حکومت نے رواں مالی سال تمام وزارتوں کے بجٹ میں30فیصد کی کٹوتی کی تھی۔

گزشتہ روز وزیر خزانہ نے آئندہ مالی سال کے بجٹ کی تیاری کیلئے گائیڈ لائنز جاری کرتے ہوئے کفایت شعاری کی پالیسی جاری رکھنے کا اعلان بھی کیا تھا۔

پاکستان کے سرکاری خبر رساں ادارے کے مطابق ہفتہ کو راولپنڈی میں وزیرِ خزانہ اور پاکستانی فوج کے سربراہ نے ملاقات کی جہاں اسحاق ڈار کا کہنا تھا کہ دفاع قومی بقا کے لیے اہم ترین حیثیت رکھتا ہے۔

واضح رہے کہ پاکستان کے وزیراعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ بھارت اور پاکستان دونوں کو اپنا دفاعی بجٹ اپنی گنجائش کے مطابق بنانا چاہیے اور اگر دونوں ملکوں کے درمیان امن اور بامعنی مکالمہ ہوتا تو یہ وسائل خطے میں ہتھیاروں کی دوڑ پر خرچ ہونے کی بجائے غریب عوام کی ترقی اور خوشحالی پر خرچ ہو رہے ہوتے۔

دوسری جانب وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کے حوالے سے کہا ہے کہ نقد امداد کے علاوہ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کے دیگر منصوبوں کو نوجوانوں کے لیے وزیر اعظم کے پروگرام سے ہم آہنگ کیا جانا چاہیے۔

بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کے بارے میں ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے انہوں نے ہدایت کی کہ زیادہ توجہ غریب لوگوں کی تربیت پر دی جانی چاہیے۔

بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کے چیئرمین انور بیگ نے اجلاس کو بتایا کہ اس امداد سے مستفید ہونے والوں کو قبل از روزگار اور دوران روزگار تربیت دینے کے سلسلے میں ایوان صنعت و تجارت خیبر پختونخوا اور کورنگی ایسوسی ایشن کے ساتھ مفاہمت کی یادداشتوں پر دستخط ہوچکے ہیں۔

اسی بارے میں