نواز شریف کی ’ذاتی ضمانت پر ڈیڑھ ارب ڈالر کا قرض‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ایک اعلیٰ اہلکار نے کہا ہے کہ یہ رقم ایک اکاؤنٹ میں منتقل ہوئی ہے جسے پاکستان ترقیاتی فنڈ کہا جاتا ہے

سعودی عرب نے حکومتِ پاکستان کو ڈیڑھ ارب ڈالر کا قرض فراہم کیا تاکہ حکومتِ پاکستان اپنے زرِ مبادلہ کے ذخائر کو بہتر کر سکے اور اپنے قرض کی ادائیگی کی ذمہ داریوں کو ادا کر سکے اور بڑے توانائی اور بنیادی ڈھانچے کے منصوبے مکمل کر سکے۔

اس قرض کی اطلاع پاکستانی حکام نے خبر رساں ادارے رائٹرز کو دی جس کے نتیجے میں پاکستانی روپے کی قدر میں تیزی سے اضافہ ہوا۔

یاد رہے کہ ایک ڈالر پاکستانی روپے کے مقابلے میں 105.40 کی قدر سے 4 سے 12 مارچ کے درمیان گر کر 97.40 تک پہنچ گیا جو کہ اس کی قدر میں 30 دن میں سب سے تیزی سے اضافہ ہے۔

ایک پاکستانی اہلکار جو اس لین دین سے باخبر ہیں نے نام نہ بتانے کی شرط پر رائٹرز کو بتایا کہ ’وزیراعظم کی ذاتی ضمانت پر سعودی عرب نے 1.5 ارب ڈالر دیے ہیں جس نے پاکستانی روپے کی قدر کو سنبھالا دیا ہے۔‘

دوسری جانب سعودی مرکزی بینک کے گورنر نے اس پر تبصرہ کرنے سے معذوری ظاہر کی ہے اور حکام نے اس قرض کی کوئی شرائط نہیں بتائی ہیں۔

ایک اور اعلیٰ اہلکار نے جو لاہور میں رہتے ہیں کہا کہ یہ رقم ایک اکاؤنٹ میں منتقل ہوئی ہے جسے پاکستان ترقیاتی فنڈ کہا جاتا ہے جو ’دوست ممالک‘ جیسا کہ سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات سے رقوم کی ترسیل کے لیے استعمال کیا جائے گا۔

ہمارے پاس 3 ارب ڈالر کے وعدے ہیں جن میں سے اب تک 1.5 ارب ڈالر موصول ہو چکے ہیں جبکہ ایک اور اہلکار نے کہا کہ ’حال ہی میں ہمیں 750 ملین ڈالر سعودی عرب سے موصول ہوئے ہیں۔‘

پاکستانی وزیراعظم میاں نواز شریف کے سعودی شاہی خاندان کے ساتھ دیرینہ تعلقات ہیں خاص طور پر جب سعودی شاہی خاندان نے ان کی دوسرے دورِ حکومت کے دوران فوجی بغاوت کے بعد انھیں جلاوطنی کے بعد پناہ فراہم کی۔

پرنس الولید بن طلال نے جو سعودی سرمایہ کار ہیں اور بیت السعود کے رکن ہیں نواز شریف کو ’پاکستان میں سعودی عرب کا اپنا آدمی‘ قرار دیا ہوا ہے۔

پاکستانی وزیرِ خزانہ اسحاق ڈار نے بدھ کو اس بات کی تصدیق کی کہ 1.5 ارب ڈالر موصول ہوئے ہیں مگر اس کے بھجوانے والے کا نام نہیں بتایا۔

انھوں نے رپورٹرز کو بتایا کہ ’آپ کیوں ہمارے دوستوں کو منظرِ عام پر لانا چاہتے ہیں۔ جو ممالک ہماری مدد کرتے ہیں وہ نہیں چاہتے کہ ان کو ظاہر کیا جائے۔‘

وزیر خزانہ نے 18 فروری کو ایک نئے فنڈ کی تشکیل کا اعلان کیا جس دن سعودی ولی عہد اور نائب وزیراعظم سلیمان بن عبدالعزیز نے پاکستان کے تین روزہ دورے کا اختتام پذیر ہوا تھا۔

یاد رہے کہ پاکستان کے نئے فوجی سربراہ جنرل راحیل شریف نے بھی اس فنڈ کی تشکیل سے دو ہفتے قبل سعودی فرمانروا شاہ عبداللہ اور اعلیٰٰ سعودی فوجی اہل کاروں سے ملاقات کی تھی۔

دوسری اعلیٰ سطحی سعودی اہل کار جنہوں نے پاکستان کا حالیہ دنوں میں دورہ کیا ان میں سعودی وزیرِ خارجہ سعود الفیصل اور پرنس سلمان بن سلطان شامل ہیں جو سعودی عرب کے نائب وزیرِ دفاع شامل ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ ISPR
Image caption گزشتہ کچھ عرصے میں کئی اعلیٰ سطحی سعودی حکام نے پاکستان کا دورہ کیا جن میں ولی عہد اور وزیرِ خارجہ شامل ہیں جبکہ پاکستانی فوج کے سربراہ نے بھی سعودی عرب کے دورے کے دوران کئی اعلیٰ سطحی اہلکاروں سے ملاقات کی

یاد رہے کہ عالمی مالیاتی فنڈ کے قرض کی تیسری قسط 550 ملین کی صورت میں مارچ کے آخر تک پاکستان کو موصول ہو گی جس کےبعد توقع کی جا رہی ہے کہ زرِ مبادلہ کے ذخائر 10 ارب ڈالر سے تجاوز کر جائیں گے۔

پاکستان کو 150 ملین اسلامی ترقیاتی بینک سے مارچ کے مہینے میں ملیں گے جبکہ 150 سے 200 ملین ڈالر کے قریب کولیشن سپورٹ فنڈ سے بھی موصول ہونے ہیں۔

پاکستان کو اس کے علاوہ مئی کے مہینے میں 500 ملین ڈالر مالیت کے یورو بانڈز جاری کرے گا اور اس کا منصوبہ ہے کہ نجکاری سے بھی اربوں ڈالر وصول کیے جائیں گے۔

بیرون ملک پاکستانیوں کی جانب سے رقوم کی ترسیل میں 11 فیصد اضافہ ہوا جس کے بعد یہ اس سال مالیاتی سال کے پہلے آٹھ مہینے کے دوران 10.2 ارب ڈالر تک پہنچ گئے۔

اسی بارے میں