’تحفظِ پاکستان آرڈننس پیش کیوں نہیں کر رہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption رضا ربانی کا کہنا تھا کہ اس سے نہ صرف اس ایوان کا استحکاک مجروع ہوا ہے بلکہ چیئرمین کے فیصلے کی بھی خلاف ورزی ہوئی ہے

پاکستان کے ایوانِ بالا سینٹ کے چیئرمین سید نیرحسین بخاری نے حکومت پر زور دیا ہے کہ وہ تحفظِ پاکستان آرڈننس کو جلد سینٹ میں پیش کردیں اور حکومت کی جانب سے ’وعدہ خلافی‘ کرنے پرشدید ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے حکومت کو منگل تک کی مہلت دے دی ہے۔

پیر کی شام جب چیئرمین سینٹ کی صدارت میں شروع ہوا تو پیپلز پارٹی کے سنیٹر میاں رضا ربانی نے نکتہ اعتراض پر کھڑے ہو کر کہا کہ حکومت نے گذشتہ سیشن میں یقین دہانی کروائی تھی کہ تحفظ پاکستان آرڈننس کوسینٹ میں پیش کیا جائےگاجو تاحال یہاں نہیں لایاگیا ہے۔

رضا ربانی کا کہنا تھا کہ اس سے نہ صرف اس ایوان کا استحکاک مجروع ہوا ہے بلکہ چیئرمین کے فیصلے کی بھی خلاف ورزی ہوئی ہے۔

انھوں نے خبردار کیا کہ اگر حکومت تحفظ پاکستان آرڈننس کو موجودہ سیشن میں نہیں لائی تو حزِب اختلاف کو احتجاج کا حق ہے۔

میاں رضا ربانی نے چیئرمین سینٹ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے قومی اسمبلی میں آرڈننس کو پیش کر کے منظور کرا دیا ہے لیکن وفاق کے ایک اہم ادارہ یعنی سنیٹ میں اس آرڈننس کو لانے میں تاخیری حربے استعمال کر رہی ہے۔

حکومت کی نمائندگی کرتے ہوئے سنٹیر راجہ ظفرالحق نے ایوان کو بتایا کہ میری کوشش تھی کہ آرڈننس کو گذشتہ اجلاس میں پیش کرتا لیکن سیشن مقررہ وقت سے ایک دو دن قبل ہی ختم ہوگیا تھا۔

اس پر چیئرمین سینٹ سید نیر بخاری نے راجہ ظفرالحق سے آرڈننس سے متعلق پوچھا کہ یہ کوئی خفیہ دستاویز ہے جسے سینٹ میں پیش کرنے سے حکومت کترا رہی ہے۔

راجہ ظفرالحق نے ایوان کو بتایا کہا کہ یہ کوئی خفیہ دستاویز نہیں ہے بلکہ تمام اخبارات میں شائع ہوچکا ہے لیکن وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار کی اسلام آباد میں غیر موجودگی کے باعث آرڈننس کو پیر کے روز سینٹ میں پیش نہیں کرسکا۔

چیئرمین سینٹ نے بعد میں سخت ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے راجہ ظفرالحق کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ وہ منگل تک اس بارے میں رپورٹ پیش کریں بصورت دیگر متعلقہ کمیٹی سے رجوع کیا جائےگا۔

انھوں نے کہا کہ بتایا جائے کہ سرکاری افسران کام نہیں کر رہے یا مذکورہ وزیر کی اس میں دلچسپی نہیں ہے یا حکومت اس ایوان کو توجہ دینے کی موڈ میں نہیںب۔

یہاں دلچسپ امر یہ بھی ہے کہ سینٹ میں ارکان کی کل تعداد ایک سو چار ہے جس میں ستر کا تعلق حزب اختلاف کی جماعتوں سے ہے جبکہ حکومت اور اتحادی جماعتوں کی تعداد تیس کے قریب ہے۔

اسی بارے میں