گیارہ مئی کا احتجاج، سخت سکیورٹی اقدامات

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption تحریکِ انصاف انتخابات میں دھاندلی کے الزامات لگاتی رہی ہے اور اسی سلسلے میں گیارہ مئی کو بھی عوامی احتجاج کیا جا رہا ہے۔

تحریکِ انصاف کے اتوار گیارہ مئی کو اسلام آباد میں پارلیمنٹ ہاؤس کے سامنے احتجاج کے شرکاء کی تلاشی کے لیے نہ صرف ’واک تھرو گیٹس‘ لگائے جائیں گے بلکہ باردو کی بو سونگھ کر اس کا پتہ لگانے والے کتوں کا استعمال بھی کیا جائے گا۔

اس موقع پر سکیورٹی کے سخت اقدامات کیے جارہے ہیں اور ان انتظامات کا جائزہ لینے کے لیے جمعہ کو وزیرِ داخلہ چوہدری نثار علی خان نے ایک اجلاس کی صدارت کی جس میں ضلعی انتظامیہ اور متعلقہ سکیورٹی اداروں کے سربراہان نے شرکت کی۔

راولپنڈی ضلع کے کمشنر اور اسلام آباد کے انسپکٹر جنرل آف پولیس اور دیگر اعلیٰ سرکاری افسران نے وزیر داخلہ کو اس موقع پر کیے جانے والے سکیورٹی انتظامات سے آگاہ کیا۔ اس اجلاس میں پولیس اہلکاروں کی تعیناتی، ٹریفک پلان اور ذرائع ابلاغ کے لیے کی جانے والے انتظامات کا بھی جائزہ لیا گیا۔

اجلاس کو بتایا گیا کہ احتجاج میں شرکت کے لیے آنے والوں کو ’واک تھرو گیٹس‘ سے گزارا جائے گا اور بارود کی بو سونگھ کر اس کا پتا لگانے والے کتوں کو بھی استعمال کیا جائے گا۔ اس کے علاوہ احتجاج کے شرکاء پر نظر رکھنے کے لیے سی سی ٹی وی کیمرے بھی نصب کیے جا رہے ہیں۔

وزیر داخلہ نے ضلعی انتظامیہ کو ہدایت کی کہ شرکاء کی حفاظت کو یقینی بنانے کے لیے ہر ممکن اقدامات کیے جائیں۔

اس سے قبل وزیرِ داخلہ چوہدری نثار علی خان نے اعلان کیا تھا کہ جلوس میں شرکت کے لیے آنے والی اگر کسی گاڑی سے اسلحہ برآمد ہوا یا اس میں کوئی بچہ سوار ہوا تو پوری گاڑی کو روک لیا جائے گا۔

یاد رہے کہ تحریکِ انصاف کے علاوہ مولانا طاہر القادری کی جماعت پاکستانی عوامی تحریک بھی اسی دن راولپنڈی سمیت ملک کے مختلف حصوں میں احتجاجی ریلیاں منعقد کر رہی ہے۔

اسی بارے میں