وزیر اعظم کا فوج کی نگرانی میں پولیو کےقطرے پلانے کا حکم

تصویر کے کاپی رائٹ reuters
Image caption قبائلی علاقوں میں شدت پسندوں کی طرف سے مخالفت کی وجہ سے بچوں کو پولیو کے قطرے پلانے کی مہمیں ادھوری رہی ہیں

وزیر اعظم میاں نواز شریف نے جمعرات کو پاکستان کے قبائلی علاقوں سے ملک کے دوسرے حصوں کی طرف آنے والے لوگوں کو پولیو کے قطرے پلانے کے عمل کی نگرانی میں فوج کو شامل کرنے کا حکم دیا ہے۔

سرکاری خبررساں ادارے اے پی پی کے مطابق قبائلی علاقوں کی سرحدوں پر قائم چوکیوں پر پولیو کے قطرے پلانے کے عمل کی نگرانی کی جائے گی اور سکیورٹی فراہم کرنے کا کام فوج کرے گی۔

پاکستان دنیا کے ان چند ملکوں میں شامل ہے جہاں سے اب تک پولیو کی مہلک بیماری کو ختم نہیں کیا جا سکا۔

کراچی سمیت ملک کے بعض شہروں اور خاص طور پر قبائلی علاقوں میں شدت پسندوں کی طرف سے مخالفت کی وجہ سے بچوں کو پولیو کے قطرے پلانے کی مہمیں ادھوری رہی ہیں اور اطلاعات کے مطابق ان علاقوں میں پولیو نے وبا کی صورت اختیار کر لی ہے۔

حال ہی میں عالمی ادارۂ صحت کی طرف سے پاکستانیوں کے بیرون ملک سفر پر پابندی کے خدشے کے پیش نظر حکومت ِ پاکستان نے بیرون ملک سفر کرنے والے تمام مسافروں کو یکم جون سے ہوائی اڈوں پر پولیو کے قطرے پلانا لازمی قرار دے دیا ہے۔

عالمی ادارۂ صحت نے پانچ مئی کو جاری ہونے والی ہدایات میں پاکستان، شام اور کیمرون کو پولیو کے پھیلاؤ کے حوالے سے بڑا خطرہ قرار دیتے ہوئے ان ممالک کے شہریوں کو بیرونِ ملک سفر سے قبل لازماً پولیو کے قطرے پلائے جانے کو کہا تھا۔

پاکستان کی نیشنل ہیلتھ سروسز کی وزارت نے اعلان کیا ہے کہ یکم جون 2014 سے پاکستان سے باہر سفر کرنے والے تمام مسافروں پر لازمی ہوگا کہ وہ سفر کے وقت پولیو ویکسینیشن کا سرٹیفیکیٹ پیش کریں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ پاکستان انٹرنیشنل ہیلتھ ریگیولیشنز 2005 کا ممبر ملک ہونے کے ناطے اپنی ذمہ داریاں مکمل طور پر نبھانے کے لیے پرعزم ہے۔