ایف آر بنوں میں دو دھماکے، دو اہلکار ہلاک

Image caption دس دن قبل سکیورٹی فورسز نے شمالی وزیرستان میں بڑی کاروائی کا آغاز کیا تھا

پاکستان کے نیم خود مختار قبائلی علاقے ایف آر بنوں میں سکیورٹی فورسز پر ہونے والے دو بم حملوں میں کم سے کم دو سکیورٹی اہلکار ہلاک اور تین زخمی ہوگئے ہیں۔

فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کی طرف سے جاری ہونے والے ایک مختصر بیان میں کہا گیا ہے یہ واقعہ جمعرات کی صبح ایف آر بنوں سے متصل شمالی وزیرستان کے سرحد کے قریب پیش آیا۔

بیان کےمطابق شدت پسندوں کی طرف سے دیسی ساخت کے دو بم سڑک کے کنارے نصب کیے گئے تھے اور جونہی سکیورٹی فورسز کی گاڑیاں وہاں سے گزریں تو اس دوران دو دھماکے ہوئے جس کے نتیجے میں دو سکیورٹی اہلکار ہلاک اور تین زخمی ہوئے۔

تاہم ابھی تک کسی تنظیم کی طرف سے اس حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی گئی ہے۔

یاد رہے شمالی وزیرستان میں گزشتہ چند ہفتوں سے حالات بدستور کشیدہ بتائے جاتے ہیں۔

دس دن قبل سکیورٹی فورسز نے شمالی وزیرستان میں بڑی کاروائی کا آغاز کیا تھا۔ یہ آپریشن تین دن تک جاری رہا تھا جس میں حکام کے مطابق سو کے قریب شدت پسند مارے گئے تھے۔تاہم مقامی ذرائع نے ہلاکتوں کی تعداد ڈیڑھ سو کے لگ بھگ بتائی تھی۔

اس کارروائی میں پاک فضائیہ کے جیٹ طیاروں اور توپ بردار ہیلی کاپٹروں کو استعمال کیا گیا تھا جس سے کئی مقامات پر مکانات اور دوکانیں ملبے کے ڈھیر میں تبدیل ہوگئے تھے۔

یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ اس کارروائی کے بعد قبائلی علاقوں میں سکیورٹی فورسز پر حملوں میں اضافہ ہوا تھا اور ایسے واقعات میں دس کے قریب سکیورٹی اہلکار مارے گئے تھے۔

اسی بارے میں