کراچی میں پولیو کا ایک اور کیس

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستان میں سب سے زیادہ پولیو کے کیس سنہ 2011 میں سامنے آئے تھے جن کی تعداد 198 تھی جب کہ اس سال اب تک 66 بچے اس مرض کا شکار ہو گئے ہیں

پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی میں جمعرات کو پولیو کا ایک اور کیس سامنے آیا ہے۔

نذیر الدین کی ڈھائی برس کی بیٹی ملالہ اس بیماری میں مبتلا ہیں۔

محکمۂ صحت کے حکام نے اس بچی میں پولیو وائرس کی تصدیق کی ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ اس بچی کا خاندان چند سال پہلے قبائلی علاقے سے کراچی منتقل ہوا تھا اور یہ بچی کراچی میں پیدا ہوئی تھی۔

حفاظتی ٹیکوں کے پروگرام (ای پی آئی) کی ڈائریکٹر ڈاکٹر دُرِ شہوار کا کہنا ہے کہ یہ خاندان گذشتہ ایک برس سے اپنی بچی کو پولیو کے قطرے پلوانے کی درخواست کو رد کر رہا تھا۔

اس خاندان نے کچھ عرصہ قبل قبائلی علاقوں کا دورہ کیا تھا جو پولیو وائرس کا گڑھ سمجھے جاتے ہیں۔

ماضی میں پولیو وائرس سے متاثرہ دیگر بہت سے بچوں کی طرح یہ بچی بھی پولیو مہم کے دوران پولیو ویکسین کے قطرے پینے سے محروم رہی تھی کیونکہ اس بچی کے خاندان نے اس پولیو کے قطرے پلانے سے انکار کر دیا تھا۔

خیال رہے کہ پاکستان میں سب سے زیادہ پولیو کے کیس سنہ 2011 میں سامنے آئے تھے جن کی تعداد 198 تھی جب کہ اس سال اب تک 67 بچے اس مرض کا شکار ہو چکے ہیں۔

پاکستان میں سنہ 2014 میں پولیو کے سب سے زیادہ 38 کیس شمالی وزیرستان سے آئے جب کہ دیگر قبائلی علاقوں سے چھ، خیبر پختونخوا سے آٹھ اور کراچی سے چار کیس رپورٹ ہوئے۔

پاکستان دنیا کے ان چند ملکوں میں شامل ہے جہاں سے اب تک پولیو کو ختم نہیں کیا جا سکا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پاکستان میں پولیو مہم میں شامل رضاکاروں اور سکیورٹی اہلکاروں پر کئی مسلح حملے ہو چکے ہیں

عالمی ادارۂ صحت کی طرف سے حال ہی میں پاکستانیوں کے بیرون ملک سفر پر پابندی کے خدشے کے پیش نظر حکومت ِ پاکستان نے بیرون ملک سفر کرنے والے تمام مسافروں کو یکم جون سے ہوائی اڈوں پر پولیو کے قطرے پلانا لازمی قرار دے دیا ہے۔

عالمی ادارۂ صحت نے پانچ مئی کو جاری ہونے والی ہدایات میں پاکستان، شام اور کیمرون کو پولیو کے پھیلاؤ کے حوالے سے بڑا خطرہ قرار دیتے ہوئے ان ممالک کے شہریوں کو بیرونِ ملک سفر سے قبل لازماً پولیو کے قطرے پلائے جانے کو کہا تھا۔

سنہ 2013 میں اپریل تک پاکستان میں 8 پولیو کے کیس سامنے آئے تھے جب کہ اس سال پہلے چار ماہ میں 56 مریض منظرِ عام پر آ چکے ہیں۔

نائیجریا اور افغانستان سمیت پاکستان ان ممالک میں شامل ہے جہاں پولیو کا وائرس عام ہے۔ تاہم، نائیجریا میں گذشتہ برس اپریل تک 14 کیس سامنے آئے تھے اور اس سال اسی مدت میں ایک کیس سامنے آیا ہے۔

اسی بارے میں