آئندہ مالی سال کا مالیاتی بل منظور

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption وزیر خزانہ نے کہا کہ بجٹ میں خط غربت سے نیچے زندگی گزارنے والے عوام کی بہتری پر خصوصی توجہ دی گئی ہے

پاکستان کی قومی اسمبلی نے اگلے مالی سال 2014 اور 15 کے لیے دی گئی بجٹ تجاویز کو شامل کرنے کے بعد مالیاتی بل کی منظوری دے دی ہے۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق ایوان نے وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی طرف سے پیش کی گئی بعض ترامیم منظور کیں تاہم حزب اختلاف کے ارکان کی متعدد تجاویز مسترد کر دی گئیں۔

تنخواہ دار طبقہ آئندہ بجٹ کا انتظار کرے: اسحاق ڈار

اس موقع پر وزیر خزانہ نے بتایا کہ پاکستان کے زرمبادلہ کے ذخائر اب 14 ارب 20 کروڑ ڈالر تک پہنچ گئے ہیں۔

وزیر خزانہ نے کہا کہ بجٹ میں خط غربت سے نیچے زندگی گزارنے والے عوام کی بہتری پر خصوصی توجہ دی گئی ہے۔

اگلے مالی سال کے لیے 39 کھرب 45 ارب روپے حجم کے وفاقی بجٹ میں شرح نمو اور سرمایہ کاری میں اضافے اور عام آدمی کے لیے ریلیف اقدامات پر مبنی متعدد پروگرام شامل ہیں۔

وزیرِ خزانہ کے مطابق حکومت نے تمام متعلقہ حلقوں کے ساتھ مشاورت کے بعدبجٹ تیار کیا اور پہلی مرتبہ ایوان بالا کی 52 تجاویز کومکمل یا جزوی طور پر مالی بل میں شامل کیا گیا۔

انھوں نے ایوان کو یقین دلایا کہ ملک کو درپیش مالی مسائل کے حل کے لیے گزشتہ برس کی طرح رواں سال بھی مالی نظم و نسق برقرار رکھا جائے گا۔

ختم ہونے والے مالی سال کے لیےقومی اسمبلی نے 111 ضمنی مطالبات زر کی منظوری دے دی ہے۔

ایوان میں ایک قرارداد متفقہ طور پر منظور کی گئی جس میں متحدہ قومی موومنٹ کی رکن قومی اسمبلی طاہرہ آصف پر ہونے والے حملے کی مذمت کی گئی جس میں وہ زخمی ہو انتقال کر گئیں۔ قرارداد میں پنجاب حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ واقعے میں ملوث افراد کو گرفتار کر کے سزا دی جائے۔

ایوان نے ایک اور قرارداد کی بھی متفقہ منظوری دی جس میں سابق وزیراعظم بینظیر بھٹو کے یوم پیدائش کے موقعے پر جمہوریت کے فروغ کے لیے ان کی کوششوں اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں جرات مندی کا مظاہرہ کرنے پر انھیں خراج عقیدت پیش کیا گیا۔

اسی بارے میں