کراچی میں ورلڈ کال کے دفتر کو آگ لگانے کی کوشش

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ایس ایس پی وسطی فیصل بشیر کا کہنا ہے کہ حملے کی وجوہات جاننے کے لیے تحقیقات جاری ہیں تاہم مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ جیوز نیوز کی نشریات دکھانے پر ورلڈ کال سینٹر کے دفتر پر حملہ کیا گیا ہے

کراچی میں ایک نجی کیبل آپریٹر کے دفتر پر حملہ کر کے اس کو نذر آتش کرنے کی کوشش کی گئی ہے جبکہ مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ حملہ آوروں نے جیو نیوز کی نشریات دکھانے پر ناراضگی کا اظہار کیا ہے۔

یہ واقعہ اتوار کی شب شہر کے پوش علاقے کلفٹن دو تلوار کے قریب واقع ورلڈ کال کے دفتر میں پیش آیا ہے۔

کلفٹن پولیس کے مطابق حملہ آور موٹر سائیکلوں پر سوار تھے جن میں سے کچھ عمارت کے نیچے موجود تھے جبکہ چار افراد نے تیسری منزل پر جا کر دفتر کو نذر آتش کرنے کی کوشش کی لیکن فائر برگیڈ نے فوری پہنچ کر آگ پر قابو پالیا۔

ایس ایس پی وسطی فیصل بشیر کا کہنا ہے کہ حملے کی وجوہات جاننے کے لیے تحقیقات جاری ہیں تاہم مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ جیوز نیوز کی نشریات دکھانے پر ورلڈ کال سینٹر کے دفتر پر حملہ کیا گیا ہے۔

کیبل آپریٹر ایسوسی ایشن کے رہنما خالد آرائیں کا کہنا ہے کہ کیبل آپریٹر عدم تحفظ کا شکار ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ’جب ایک بڑے آپریٹر پر حملہ ہوسکتا ہے تو چھوٹے آپریٹر کہاں سے محافظ لاسکتے ہیں۔‘

یاد رہے کہ کراچی میں صحافی حامد میر پر قاتلانہ حملے کے بعد پاکستان کے خفیہ ادارے آئی ایس آئی کے سربراہ کا نام لینے اور بعد میں مارننگ شو میں ایک قوالی کی مبینہ طور پر غلط عکاسی کرنے پر پیمرا نے پندرہ روز کے لیے جیو نیوز کی نشریات معطل کر دی تھیں لیکن مقررہ مدت پوری ہونے کے باوجود چینل کی نشریات مکمل طور پر بحال نہیں ہوسکی ہے۔

ملک کے کچھ علاقوں میں جیو نیوز کی نشریات بحال کی گئی ہیں تاہم وہ بھی ٹی وی سیٹ کے آخری نمبر کے چینلز پر موجود ہے۔ کیبل آپریٹرز کا کہنا ہے کہ انھیں دھمکیاں دی جا رہی ہیں کہ جیو نیوز کی نشریات نہ دکھائی جائیں، اس لیے وہ مجبور ہیں۔

یاد رہے کہ اسلام آباد میں کیبل آپریٹرز اور پیمرا میں سنیچر کو مذاکرات ہوئے تھے، جس میں جیو نیوز کی نشریات بحال کرنے پر اتفاق کیا گیا تھا۔

روزنامہ جنگ کے مطابق کیبل آپریٹرز ایسوسی ایشن کے رہنما خالد آرائیں کا کہنا تھا کہ کیبل آپریٹرز پِس کر رہ گئے ہیں۔ ان کے مطابق وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید نے یقین دہانی کرائی ہے کہ چاروں آئی جیز سے رابطہ کر کے کیبل آپریٹرز کی سکیورٹی کو یقینی بنایا جائے گا۔

اسی بارے میں