کراچی: علامہ طالب جوہری کے داماد قتل

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption مجلس وحدت مسلمین کا دعویٰ ہے کہ گذشتہ 24 گھنٹوں میں شیعہ برادری کے چار افراد کو نشانہ بنایا گیا ہے

کراچی کے علاقے گلشن اقبال میں نامعلوم حملہ آوروں نے علامہ طالب جوہری کے داماد مبارک رضا کاظمی ایڈووکیٹ کو گولی مار کر قتل کر دیا ہے۔

مجلس وحدت مسلمین کا دعویٰ ہے کہ گذشتہ 24 گھنٹوں میں شیعہ برادری کے چار افراد کو نشانہ بنایا گیا ہے۔

مبارک رضا کاظمی ایڈووکیٹ کو بدھ کی دوپہر کو اس وقت نشانہ بنایا گیا جب وہ عدالت سے واپس گھر جا رہے تھے۔

ایس پی گلشن اقبال عابد قائم خانی کا کہنا ہے کہ مبارک رضا تیرہ ڈی کے علاقے میں پھل لینے کے لیے رکے تھے اور خریداری کے بعد واپس اپنی کار میں سوار ہوئے تو دو موٹر سائیکلوں پر سوار چار مسلح افراد نے ان پر فائرنگ کی جس میں وہ موقعے ہی پر ہلاک ہوگئے۔

ایس پی عابد قائم خانی نے کہا کہ چند فرلانگ پر موجود پولیس اہلکاروں نے ملزمان کا پیچھا کیا، اور ان سے فائرنگ کے تبادلے میں ایک حملہ آور زخمی ہوگیا ہے جس کی تلاش کی جا رہی ہے۔

دوسری جانب مجلس وحدت مسلمین کے ترجمان نے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ مبارک رضا نامور عالم اور ذاکر علامہ طالب جوہری کے داماد تھے۔

مجلس وحدت مسلمین کا کہنا ہے کہ گذشتہ 24گھنٹوں کے شیعہ برادری سے تعلق رکھنے والے چار افراد کو ہلاک کیا گیا ہے۔ مبارک رضا سے قبل منگھو پیر میں غلام ذکی، پاک کالونی میں حسنین جبکہ گلشن اقبال میں ہی ایک میاں بیوی پر فائرنگ کی گئی جس میں مسماۃ ہما ہلاک جبکہ بلال حسین زخمی ہوگئے ہیں۔

مجلس وحدت مسلمین کا کہنا ہے کہ جب تک کراچی سمیت ملک کے شہری علاقوں میں شدت پسند تنظیموں کے خلاف آپریشن نہیں کیا جاتا اس وقت تک شمالی وزیرستان میں آپریشن بے معنی رہے گا۔

دوسری جانب مبارک رضا ایڈووکیٹ کی ہلاکت کے خلاف کراچی میں وکلا تنظیموں نے کل عدالتی کارروائی کے بائیکاٹ کا اعلان کیا ہے۔

اسی بارے میں