’افغانستان سے شدت پسندوں کا حملہ‘، ایک اہلکار ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption دہشت گرد ماضی میں بھی افغانستان سے سرحد پار کر کے پاکستانی علاقے میں حفاظتی چوکیوں اور سکیورٹی اہلکاروں کو نشانہ بناتے رہے ہیں

پاکستان کے سکیورٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ افغانستان سے 70 سے 80 شدت پسندوں نے صوبے بلوچستان کے مسلم باغ سیکٹر میں پاکستانی حدود میں حملہ کیا ہے۔

حکام کے مطابق پاکستانی سکیورٹی فورسز نے ان شدت پسندوں کو روکنے کی کوشش کی تو انھوں نے فائرنگ کر دی۔

حکام کے مطابق فائرنگ کے تبادلے میں ایف سی کے نائیک نیاز ہلاک ہو گئے۔

مسلم باغ سیکٹر کوئٹہ سے تقریباً 100 کلومیٹر کے فاصلے پر قلع سیف اللہ میں واقع ہے۔ قلع سیف اللہ کی سرحد افغانستان سے ملتی ہے۔

خیال رہے کہ شدت پسند ماضی میں بھی افغانستان سے سرحد پار کر کے پاکستانی علاقے میں حفاظتی چوکیوں اور سکیورٹی اہلکاروں کو نشانہ بناتے رہے ہیں۔

اس سے پہلے پاکستان کے قبائلی علاقے باجوڑ میں گذشتہ برس افغانستان سے آنے والے شدت پسندوں نے سالارزئی کے علاقے میں ایک حفاظتی چوکی پر حملہ کیا تھا۔

شدت پسندوں کے اس حملے میں تین سکیورٹی اہلکار ہلاک اور دو زخمی ہو گئے تھے۔

پاکستان کی جانب سے سرکاری سطح پر افغانستان سے اس قسم کی کارروائیاں کرنے والے شدت پسندوں کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا جاتا رہا ہے۔

کچھ عرصہ سے افغانستان کی جانب سے پاکستانی علاقوں میں شدت پسندوں کے حملوں میں اضافہ دیکھا جا رہا ہے۔

اسی بارے میں