خیبر: نیٹو آئل ٹینکر پر ایک اور حملہ، دو ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption خیبر ایجنسی میں نیٹو ٹینکروں پر آٹھ دنوں میں تین حملے ہو چکے ہیں

پاکستان کے قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں افغانستان میں تعینات نیٹو افواج کے لیے تیل لے جانے والے ٹینکر پر حملے میں دو افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

مقامی انتظامیہ کے مطابق یہ واقعہ پیر کی صبح ایجنسی کی تحصیل جمرود کے علاقے وزیر ڈنڈ میں اس وقت پیش آیا جب نامعلوم مسلح افراد نے پشاور سے طورخم کے راستے افغانستان جانے والے ٹینکر پر فائرنگ کی۔

انتظامیہ کے اہلکار کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والوں میں ٹینکر کا ڈرائیور اور کلینر شامل ہیں جنھیں حملہ آوروں نے براہِ راست نشانہ بنایا۔

ہلاک ہونے والے ڈرائیور کا تعلق لکی مروت اور کلینر کا تعلق لنڈی کوتل سے بتایا گیا ہے۔

پولیٹکل انتظامیہ کے اہلکاروں کا کہنا ہے کہ اس واقعے کی اطلاع ملتے ہی تحصیلدار موقعے پر پہنچ گئے اور واقعے کی تحقیقات کی جا رہی ہیں۔

جمرود میں ماضی میں بھی نیٹو کے کنٹینروں اور ٹینکروں پر حملے ہوتے رہے ہیں اور یہ اس علاقے میں گذشتہ ایک ہفتے کے دوران نیٹو کے ٹینکروں کو نشانہ بنائے جانے کا تیسرا واقعہ ہے۔

اب تک ان حملوں میں پانچ افراد ہلاک اور تین زخمی ہو چکے ہیں۔

اس سے قبل جمعرات کو سور قمر کے مقام پر موٹر سائیکل پر سوار نامعلوم افراد نے دو ٹینکروں پر اندھا دھند فائرنگ کی تھی جس سے ٹینکروں کو آگ لگ گئی تھی اور ایک ڈرائیور ہلاک اور تین افراد زخمی ہوئے تھے۔

اس واقعے سے دو روز قبل افغانستان سے واپس آنے والے ایک خالی ٹینکر پر نامعلوم افراد نے فائرنگ کی جس میں ڈرائیور اور کلینر دونوں ہلاک ہو گئے تھے۔

نیٹو کے لیے رسد لے جانے والے ٹینکروں اور کنٹینروں پر حملوں کا تازہ سلسلہ خیبر ایجنسی میں سکیورٹی فورسز کی کارروائی کے بعد شروع ہوا ہے۔

سکیورٹی فورسز نے چند روز پہلے خیبر ایجنسی میں شدت پسندوں کے پانچ ٹھکانوں پر فضائی حملے کیے تھے جس میں ہلاکتوں کی اطلاعات ملی تھیں۔

اسی بارے میں