عمران خان اور طاہر القادری کی دھرنے میں عید

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption نماز کے بعد طاہر القادری نے اپنے کارکنوں سے مختصر خطاب کیا جبکہ عمران خان شام کو خطاب کریں گے

پاکستان میں آج سرکاری طور پر سخت سکیورٹی انتظامات میں عیدالاضحیٰ روایتی جوش و جذبے سے منائی جا رہی ہے۔

اسلام آباد میں تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان اور عوامی تحریک کے سربراہ طاہر القادری نے اپنے اپنے کارکنوں کے ساتھ شاہراہ دستور پر اکٹھے ایک ساتھ نماز عید ادا کی۔

عید کی نماز کے لیے خواتین کے لیے الگ انتظام کیا گیا تھا۔ دھرنے میں عوامی تحریک کے بعض کارکن قربانی کے جانور بھی اپنے ساتھ لائے تھے۔

وزیراعظم نواز شریف نے رائے ونڈ میں اپنی نجی رہائش گاہ میں عید کی نماز ادا کی جبکہ سابق صدر آصف علی زرداری نے لاہور میں واقع بلاول ہاؤس میں نماز ادا کی۔

اسلام آباد میں تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے ڈی چوک میں اپنے دھرنے میں نماز ادا کی جبکہ ان کے قریب عوامی تحریک کے دھرنے میں طاہر القادری نے نماز ادا کی اور بعد میں دونوں رہنماؤں نے ایک دوسرے سے عید ملی۔

بری فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف نے قبائلی علاقے جنوبی وزیرستان کے صدر مقام وانا میں نماز عید ادا کی۔

پاکستان میں ہمیشہ کی طرح اس مرتبہ بھی ملک بھر میں ایک دن عید نہ منانے کی روایت برقرار رہی بلکہ اس مرتبہ تو تین مختلف دن عید منائی گئیں۔

پشاور میں مقیم افغان مہاجرین نے سنیچر کو عید منائی، خیبر پختونخوا کے کچھ علاقوں میں اتوار کو عید تھی جبکہ باقی ملک پیر کو عید منا رہا ہے۔

عید کے موقع ملک کے بڑے شہروں میں اجتماعات کا اہتمام کیا گیا اور عید کی نماز ادا کی گئی۔

عید کی نماز کے بعد لوگ جانوروں کی قربانی میں مصروف ہیں۔

عید کے اجتماعات کے لیے ملک بھر میں سکیورٹی کے سخت اتنظامات کیے گئے اور حساس مقامات پر اضافی نفری تعینات کی گئی ہے۔

پاکستان کے علاوہ بھارت، سری لنکا اور ایشیا کے دیگر ممالک میں بھی مسلمان عید منا رہے ہیں۔

اسی بارے میں