کراچی: زہریلی شراب پینے سے ہلاکتوں کی تعداد 27 ہو گئی

تصویر کے کاپی رائٹ THINKSTOCK
Image caption متاثرین کی عمریں 20 سے 40 سال کے درمیان ہیں

کراچی میں زہریلی شراب پینے سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد 27 ہوگئی ہے جبکہ متاثرہ علاقے کے چار ایس ایچ اوز کو معطل کر دیا گیا ہے۔

زہریلی شراب پینے کے باعث بے ہوش ہوجانے والے نوجوان جناح ہسپتال میں زیر علاج ہیں۔ شعبۂ حادثات کی سربراہ ڈاکٹر سیمی جمالی کا کہنا ہے کہ ہلاکتوں میں اضافہ ہو رہا ہے اور اب تک 27 افراد ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ 26 زیر علاج ہیں، جن میں سے بھی بعض کی حالت تشویش ناک ہے۔

متاثرین کی عمریں 20 سے 40 سال کے درمیان ہیں۔

دوسری جانب ڈی آئی جی ایسٹ منیر احمد شیخ نے غفلت برتنے پر متاثرہ علاقوں کے چار ایس ایچ اوز کو معطل کر دیا ہے۔

معطل شدہ پولیس اہلکاروں میں زمان ٹاؤن، شرافی گوٹھ، لانڈھی اور کورنگی کے ایس ایچ اوز شامل ہیں۔ ڈی آئی جی کے مطابق دو ڈی ایس پیز کے خلاف بھی تحقیقات کی جا رہی ہیں۔

واضح رہے کہ یہ چند ہفتوں میں سندھ میں زہریلی شراب کے باعث ہلاکتوں کادوسرا بڑا واقعہ ہے۔

قبل ازیں عید سے ایک ہفتہ پہلے صوبے کے دوسرے بڑے شہر حیدرآباد میں ایسے ہی واقعے میں دو درجن کے قریب افراد جان سے ہاتھ دھو بیٹھے تھے۔

خیال رہے کہ پاکستان میں شراب بیچنے اور پینے پر پابندی عائد ہے اور صرف غیر مسلم افراد حکومتی لائسنس سے مقرر کردہ جگہوں سے شراب خرید سکتے ہیں۔

کراچی میں شراب کی فروخت کی 100 سے زائد لائسنس یافتہ دکانیں ہیں۔

اسی بارے میں