’بھارت پر پاکستان سے مذاکرات کرنے کے لیے زور دیا جائے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption پاکستان اور بھارت کے ڈائریکٹر جنرل ملٹری آپریشنز کے درمیان منگل کو ہاٹ لائن پر رابطہ بھی ہوا ہے

وزیرِ اعظم پاکستان کے مشیر برائے خارجہ امور سرتاج عزیز نے سکیورٹی کونسل کے مستقل رکن ممالک کے سفیروں سے کہا ہے کہ وہ بھارت پر جنگ بندی کے معاہدے کی پاسداری کرنے اور پاکستان کے ساتھ بامعنی مذاکرات کرنے کے لیے زوردیں۔

پاکستان کے دفترِ خارجہ کی طرف سے جاری بیان کے مطابق سرتاج عزیز نے یہ بات اسلام آباد میں پیر کواقوامِ متحدہ کے سکیورٹی کونسل کے پانچ مستقل رکن ممالک یا پی فائیو کے سفیروں کو کشمیر میں لائن آف کنٹرول اور ورکنگ باؤنڈری پر موجودہ صورتِ حال پر بریفنگ دیتے ہوئے کہی۔

اس بریفنگ میں پاکستانی سیکریٹری خارجہ اعزاز چوہدری نے بھی شرکت کی۔

دریں اثنا پاکستان اور بھارت کے ڈائریکٹر جنرل ملٹری آپریشنز کے درمیان منگل کو ہاٹ لائن پر رابطہ بھی ہوا ہے۔ پاکستان کی سرکاری ٹی وی پی ٹی وی نے ملک کے عسکری حکام کے حوالے سے بتایا کہ یہ ڈی جی ایم اوز کے درمیان یہ ہفتہ وار معمول کا ربطہ تھا۔

حکام کے مطابق پاکستان نے کے ڈی جی ایم او نے اپنے بھارتی ہم منصب کے ساتھ رابطے میں ایل او سی پر ’بلا اشعال‘ فائرنگ پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا اور انھیں شہری آبادی پر ہونے والی گولہ باری سے آگاہ کیا۔

واضح رہے کہ پاکستانی اور بھارتی افواج کی جانب سے ورکنگ باؤنڈری اور لائن آف کنٹرول پر حالیہ دنوں میں فائرنگ اور گولہ باری سے اب تک کی اطلاعات کے مطابق 19 افراد ہلاک ہوئے ہیں جن میں نو افراد کا تعلق بھارت سے ہے جبکہ 11 پاکستانی ہیں۔

پاکستان کے دفترِ خارجہ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ پاکستانی مشیرِ خارجہ نے بریفنگ کے دوران وزیرِ اعظم نواز شریف کا مئی سنہ 2013 میں اقتدار میں آنے کے بعد بھارت کی طرف مثبت رویہ اختیار کرنے اور پرامن جنوبی ایشیا کے تصور کا ذکر کیا۔

سرتاج عزیز نے مذمت کرتے ہوئے کہا کہ پہلے اگست میں سیکریٹری سطح پر ہونے والے مذاکرات کو منسوخ کر دیا گیا اور پھر اس کے بعد بھارت نے لائن آف کنٹرول اور ورکنگ باؤنڈری پر بلااشتعال فائرنگ کی جس سے عام شہری ہلاک ہوئے اور املاک کو نقصان پہنچا۔

انھوں نے الزام لگایا کہ بھارت کی طرف سے جنگ بندی کی خلاف ورزی کرنے اور بھارتی رہنماؤں کی جانب سے اشتعال انگیز بیانات سے نہ صرف امن کوششوں کو نقصان پہنچ رہا ہے بلکہ یہ پاکستان کی ’دہشتگردی کے خلاف جنگ‘ آپریشن ضربِ عضب سے توجہ ہٹنے کا باعث بھی بنتا ہے۔

علاوہ ازیں اقوامِ متحدہ میں پاکستان کے سفیر مسعود خان نے سرتاج کی طرف سے اقوامِ متحدہ کے سیکریٹری جنرل کو لکھا گیا خط بھی پہنچا دیا ہے جس میں ورکنگ باؤنڈری اور لائن آف کنٹرول کی صورتحال کی جانب توجہ دلائی گئی ہے۔

Image caption پاکستان کے سفیر مسعود خان نے سرتاج کی طرف سے اقوامِ متحدہ کے سیکریٹری جنرل کو لکھا گیا خط بھی پہنچا دیا ہے جس میں ورکنگ باؤنڈری اور لائن آف کنٹرول کی صورتحال کی جانب توجہ دلائی گئی ہے

یہ خط سکیورٹی کونسل کی صدر ماریہ کریسٹینا پارسیوال کو بھی ترسیل کیا گیا ہے۔

ادھر وزیراعظم پاکستان میاں نوازشریف نے کہا ہے کہ پاکستان اور بھارت اپنے مسائل صرف مذاکرات سے حل کرسکتے ہیں۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق پیر کے روزاسلام آباد میں امریکی کانگریس کے ارکان ٹم کین اور اینگس کنگ سے ملاقات میں اُنھوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے اقوام متحدہ کی قراردادیں بنیادی اہمیت کی حامل ہیں۔

وزیرِ اعظم نے اقوام متحدہ پر بھی زوردیا کہ وہ کشمیر کے بارے میں اپنی قراردادوں پر عملدرآمد یقینی بنائے۔ اُنھوں نے مزید کہا کہ مسئلہ کشمیر کو کشمیریوں کی خواہشات کے مطابق حل کیاجانا چاہیے۔

اسی بارے میں