’نئے پاکستان کے لیے تھوڑا پاگل پن ضروری ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ۔۔میں پیش گوئی کرتا ہوں کہ اگلی عید سے پہلے نیا پاکستان بن جائے گا: عمران خان

پاکستان تحریک انصاف کےسربراہ عمران خان نے کہا ہے کہ اگلی عید تک ملک میں تبدیلی آ چکی ہوگی اور ملک میں تبدیلی لانے کےلیے ’تھوڑے پاگل پن‘ کی ضرورت ہے۔

عمران خان نےبی بی سی کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا کہ ’وہ انقلاب لے کر آ رہے ہیں، نیا پاکستان بنانا ہے اور اس کے لیے تھوڑے پاگل پن کی ضرورت ہے۔‘

جو ملک میں انقلاب لاتا ہے، اس میں پاگل ہونا پڑتا ہے، جو کوئی بڑا کام کرتا ہے اس میں اگر پاگل پن نہ ہو اور منطق ہو تو کام نہیں ہوسکتا‘

تحریک انصاف کے سربراہ نے کہا کہ پارلیمنٹ میں موجود تمام جماعتیں اکٹھی ہو کر تبدیلی کو روک رہی ہیں۔ انھوں نے کہا کہ پارلیمنٹ پر دیگر جماعتوں کا غلبہ ہے، جنھوں نے نیب، الیکشن کمیشن اور نگراں حکومتیں اپنی مرضی سے مک مکا کر کے بنائیں۔

عمران خان نے بتایا کہ انھوں نے کوشش کی تھی کہ پارلیمنٹ کے اراکین اپنے اثاثہ جات ظاہر کریں اور ٹیکس ادا کریں۔ تاہم انھوں نے مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ’پاکستان میں پارلیمنٹ فراڈ ہے۔‘

پاکستان تحریک انصاف کےسربراہ عمران خان نے کہا ہے کہ وہ پیش گوئی کر رہے ہیں کہ اگلی عید تک ملک میں تبدیلی آ چکی ہوگی۔

عمران خان نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ طاہرالقادری کی جانب سے دھرنے کے خاتمے سے ان کی جماعت کو کوئی فرق نہیں پڑتا کیونکہ اب لوگ متحرک ہوگئے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ طاہر القادری کے لوگ جس طرح 31 اگست کو پولیس سے لڑے اور اور پی ٹی آئی کو بچایا وہ اس کے لیے ان کے شکر گزار ہیں۔

70 سے زائد دنوں سے جاری دھرنا دینے والے عمران خان نے شکوہ کیا کہ وہ جب بھی سوال کرتے ہیں کہ حکومت انتخابات میں دھاندلی کر کے آئی ہے تو کہا جاتا ہے کہ جمہوریت خطرے میں ہے، آپ فوج کی وجہ سے ایسا کر رہے ہیں۔

عمران خان نے متعدد بار وزیراعظم کے جانے اور حکومت کے خاتمے کی ڈیڈلائن دے چکے ہیں۔ جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا انھیں شرمندگی ہے کیونکہ وزیراعظم تو اب بھی اپنے عہدے پر موجود ہیں۔

’میں نے کبھی کوئی ڈیڈ لائن نہیں دی میں نے تو یہ کہا ہے کہ میں جب تک نواز شریف کا استعفیٰ نہیں لوں گا دھرنا ختم نہیں کروں گا۔‘

تاہم انھوں نے یہ کہا کہ وہ ایک ڈیڈ لائن دیتے ہیں: ’میں پیش گوئی کرتا ہوں کہ اگلی عید سے پہلے نیا پاکستان بن جائے گا۔‘

اسی بارے میں