قوم کو گمراہ نہ کریں، نواز شریف کا برلن سے پیغام

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption پاکستان کی ضرورت ترقی ہے خوشحالی ہے دھرنے نہیں ہیں: نواز شریف

پاکستان کے وزیراعظم میاں محمد نواز شریف نے کہا ہے کہ دھرنوں پر توانائیاں خرچ نہیں کرنی چاہییں نہ ہی قوم کو گمراہ کیا جائے۔

دو روزہ سرکاری دورے پر جرمنی پہنچنے کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے نواز شریف نے کہا کہ یورپ میں جرمنی پاکستان کا سب سے بڑا تجارتی شراکت دار ہے۔

انھوں نے بتایا کہ ’چین سے بڑے معاہدوں پر دستخط ہوئے ہیں اور اب جرمنی کے ساتھ بھی تعاون بڑھائیں گے۔‘

میاں نواز شریف نے چین اور جرمنی کے ساتھ تجارتی تعاون کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ملک کی تمام سیاسی جماعتوں اور قوم کو معیشت کی جانب توجہ مرکوز رکھنی چاہیے۔

’ہم اپنی توانائیاں دھرنوں میں ضائع نہ کریں، قوم کو گمراہ نہ کریں، قوم کو سیدھی راہ دکھائیں، جس سے بے روزگاری کا خاتمہ ہو، شعور آئے، بیداری ہو، قوم ترقی کے راستے پر گامزن ہو، اچھی سڑکیں بنیں، بجلی کی کمی پوری ہو۔‘

نواز شریف کو اس دورے کی دعوت جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے دی تھی۔ وزیراعظم نے کہا کہ وہ جرمن چانسلر اور صدر سمیت اہم حکومتی شخصیات سے ملاقات کریں گے۔

انھوں نے اس توقع کا اظہار کیا کہ اگر چین اور جرمنی کے ساتھ طے پانے والے معاہدوں پر عمل درآمد ہوا تو پانچ سے دس سال میں پاکستان معاشی طور پر بہت مضبوط ہو جائے گا اور پاکستان کی یہی ضرورت ہے۔

’پاکستان کی ضرورت ترقی ہے، خوشحالی ہے، دھرنے نہیں ہیں۔‘

پاکستان ٹیلی ویژن کے مطابق میاں نواز شریف جرمنی میں پاکستان سرمایہ کاری بورڈ کے زیر اہتمام ایک بزنس فورم سے بھی خطاب کریں گے جس میں بڑی تعداد میں جرمن تاجروں اور سرمایہ کاروں کی شرکت متوقع ہے۔

پاکستان اور جرمنی کے درمیان دو طرفہ تجارت کاسالانہ حجم ڈھائی ارب ڈالر ہے۔

وزیر اعظم 13 نومبر کو لندن میں توانائی کانفرنس میں شرکت بھی کریں گے۔

یاد رہے کہ میاں نواز شریف اتوار کو چین کے سرکاری دورے سے وطن واپس لوٹے تھے جہاں انھوں نے چین کے ساتھ 19 معاہدوں اور مفاہمت کی یادداشتوں پر دستخط کیے تھے۔

میاں نواز شریف ایک ایسے وقت میں بیرونی ممالک کے دورے کر رہے ہیں جب ایک صوبے کی حکمران جماعت پاکستان تحریک انصاف دارلحکومت اسلام آباد میں انتخابات میں ہونے والی مبینہ دھاندلی کے خلاف گذشتہ تین ماہ سے دھرنا دیے ہوئے ہے۔

اسی بارے میں