فرزانہ قتل کیس میں چار ملزمان کو سزائے موت

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption فرزانہ کو چند ماہ پہلے لاہور ہائیکورٹ کے باہر اس کے خاندان کے افراد نے اینٹیں مار کر قتل کر دیا تھا

لاہور میں انسدادِ دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے پسند کی شادی کرنے پر اپنے خاندان کے ہاتھوں قتل ہونے والی خاتون کے چار قاتلوں کو سزائے موت کی سزا سنائی ہے۔

فرزانہ نامی اس خاتون کو رواں برس 27 مئی کو لاہور ہائیکورٹ کے باہر اس کے خاندان کے افراد نے اس وقت اینٹیں مار کر قتل کر دیا تھا جب وہ اپنے شوہر کے ہمراہ ایک مقدمے کی پیشی کے لیے عدالت کے احاطے میں داخل ہو رہی تھیں۔

30 سالہ فرزانہ کا تعلق فیصل آباد کی تحصیل جڑانوالہ سے تھا اور انھوں نے گھر والوں کے مخالفت کے باوجود محمد اقبال سے پسند کی شادی کی تھی۔

فرزانہ کے خاوند نے اپنے سسر اور دو برادرانِ نسبتی کے علاوہ فرزانہ کے سابقہ منگیتر اور 15 نامعلوم افراد کے خلاف مقدمہ درج کرنے کی درخواست دی تھی۔

انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے بدھ کو دلائل مکمل ہونے پر فرزانہ کے والد محمد عظیم، بھائی محمد زاہد، سابق منگیتر مظہر عباس اور کزن جہان احمد کو تین تین مرتبہ موت کی سزا اور ایک ایک لاکھ روپے جرمانے کی سزا سنائی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption فرزانہ نےگھر والوں کے مخالفت کے باوجود پسند کی شادی کی تھی

فرزانہ کے ایک اور بھائی غلام احمد کو دس سال قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

پولیس حکام کے مطابق جب لاہور ہائیکورٹ کے قریب فرزانہ پر حملہ ہوا تو آس پاس موجود پولیس اہلکار موجود انھیں بچانے کے لیے دوڑے بھی لیکن چار حملہ آوروں کے علاوہ وہاں موجود ان کے مسلح ساتھیوں نے پولیس سے مزاحمت کی اور جتنی دیر میں پولیس اہلکار نے پستول چھینا فرزانہ مر چکی تھیں۔

اس واقعے پر پاکستان کے اندر اور عالمی سطح پر انسانی حقوق کی تنظیموں نے شدید احتجاج کیا تھا اور حکومت سے مطالبہ کیا تھا کہ اس واقعے میں ملوث افراد کو جلد کیفر کردار تک پہنچایا جائے۔

ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان

انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والے ادارے ایچ آر سی پی کی چیئر پرسن زہرا یوسف نے عدالتی فیصلے پر اپنے رد عمل میں کہا ہے کہ اگرچہ ان کا ادارہ موت کی سزا کے خلاف ہے تاہم انصاف کی فراہمی ضروری ہے۔

بی بی سی کی حمیرہ کنول سے گفتگو میں ان کا کہنا تھا کہ ’ابھی فیصلے کی کاپی نہیں دیکھی اس کے بعد ہی ردعمل دیا جا سکے گا۔‘

زہرہ یوسف کا کہنا تھا کہ پاکستان میں ہر سال غیرت کے نام پر قتل ہونے والی خواتین کی تعداد 900 سے 1000 کے قریب ہوتی ہے۔

ایچ آر سی پی کے مطابق سال 2013 میں پاکستان میں غیرت کے نام پہ 510 خواتین کو قتل کیا گیا۔ جبکہ 352 خواتین کو کاروکاری کیا گیا اور 874 کو دیگر وجوہات پر قتل کیا گیا۔

غیرت کے نام پر قتل ہونے والی 510 عورتوں میں سے 254 عورتوں کوناجائز تعلقات کے نام پر جبکہ 157 کو پسند کی شادی کرنے کے جرم میں قتل کیا گیا۔

اسی بارے میں