’خودکش حملے کم ہوئے، ٹارگٹ کلنگ بڑھ گئی‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پشاور اور وادی سوات دو ایسے علاقے ہیں جہاں ٹارگٹ کلنگ کے واقعات میں زیادہ اضافہ ہوا ہے

پاکستان کے شدت پسندی سے سب سے زیادہ متاثرہ صوبہ خیبر پختونخوا کی حکومت اور پولیس کا کہنا ہے کہ سنہ 2013 کے مقابلے میں رواں سال پرتشدد کارروائیوں میں جہاں مجموعی طور پر سات فیصد کمی آئی ہے وہیں خودکش حملوں کی تعداد میں 45 فیصد کمی ہوئی ہے۔

صوبائی پولیس کی کرائم ریکارڈ برانچ کے اعداوشمار کے مطابق گذشتہ برس صوبے میں دہشت گردی کے 459 واقعات کے مقابلے میں اس سال اب تک 438 واقعات رونما ہوئے ہیں۔

2013 میں قبائلی علاقوں سے جڑے صوبے میں 18 خودکش حملے ہوئے جبکہ اس سال یہ تعداد دس ہے۔ اس کے علاوہ دھماکہ خیز مواد سے لدی گاڑیوں کے حملوں میں استعمال کی شرح بھی 50 فیصد کم ہوئی ہے اور اس برس ایسے حملوں کی تعداد تین رہی ہے۔

اس کے علاوہ پولیس کے مطابق دیسی ساختہ دھماکہ خیز مواد سے حملوں میں بھی 25 فیصد کمی ہوئی جو 20 سے کم ہو کر 14 رہ گئے ہیں۔

لیکن پولیس کی روایتی زبان میں کہا جائے تو ’سب اچھا‘ بھی نہیں ہے۔

اعداد و شمار کے مطابق اس سال صوبے میں ہدف بنا کر ہلاکتوں یا ٹارگٹ کلنگ کے واقعات میں قابل تشویش اضافہ دیکھا گیا ہے۔

گذشتہ برس ایسے حملوں میں 113 افراد مارے گئے اور اس برس یہ تعداد بڑھ کر 131 ہوگئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption دھماکہ خیز مواد سے لدی گاڑیوں کے حملوں میں استعمال کی شرح بھی 50 فیصد کم ہوئی ہے

پشاور اور وادیِ سوات دو ایسے علاقے ہیں جہاں ان حملوں میں زیادہ اضافہ ہوا ہے اور پولیس حکام کا کہنا ہے کہ ان میں زیادہ تر کا ہدف سکیورٹی اہلکار بنے ہیں۔

اس کے علاوہ صوبے میں عام تاثر یہ ہے کہ اغوا برائے تاوان کے واقعات بڑھ رہے ہیں، تاہم صوبائی پولیس کا کہنا ہے کہ یہ جرم گذشتہ برس کی سطح پر برقرار ہے۔

پولیس کے مطابق اس برس تقریباً 200 اغوا کار گرفتار ہوئے جبکہ 80 مغویوں کو بازیاب کروایا گیا ہے۔

خیبر پختوا پولیس کے اہلکاروں کے مطابق پولیس فورس کا مورال اور کارکردگی بہتر ہوئی ہے اور دہشت گردی کے واقعات میں کمی کی وجہ ان کی ’پرو ایکٹو‘ حکمت عملی ہے۔

ان کا دعویٰ ہے کہ اس عرصے کے دوران پولیس نے دہشت گردی کے سو سے زائد حملے ناکام بنائے ہیں اور ڈیڑھ سو سے زائد مشتبہ شدت پسند گرفتار کیے ہیں جبکہ 26 دہشت گردوں کو مقابلوں میں ہلاک کرنے کے علاوہ 27 کو عدالتوں سے سزائیں دلوانے میں کامیابی ہوئی ہے۔

تاہم حکام تسلیم کرتے ہیں کہ اس سال بھتہ خوری کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے اور رواں سال تقریباً 300 ایسے واقعات رجسٹر ہوئے ہیں۔ تاہم حکام کا کہنا ہے کہ گذشتہ پانچ برس میں بھتہ خوری کے واقعات کو جان بوجھ کر کم دکھایا گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption 2014 میں پولیس نے دہشت گردی کے سو سے زائد حملے ناکام بنائے ہیں

خیال رہے کہ خیبر پختونخوا کے پولیس سربراہ ناصر درّانی نے ایک بیان میں بھتہ خوری کو صوبے کا ایک بڑا مسئلہ قرار دیا اور اسی لیے انھوں نے ہر ڈویژنل ہیڈ کوارٹر میں موبائل فون کے فورینسک سیل قائم کیے ہیں۔ انھوں نے اس بارے میں تمام ایس ایس پیز کو خصوصی توجہ دینے کی ہدایت بھی کی ہے۔

مبصرین کے خیال میں خیبر پختونخوا میں جرائم اور دہشت گردی میں اس کمی کی وجہ پولیس کی کامیاب حکمت عملی کی بجائے شدت پسندوں کی طریقۂ کار میں تبدیلی کا عمل دخل زیادہ ہو سکتا ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ اس کے علاوہ شدت پسندوں کے اندرونی مسائل اور فوجی کارروائیوں کی وجہ سے اس وقت ان کا ’بیک فٹ‘ پر ہونا بھی اس کی وجہ ہو سکتا ہے۔

پاکستانی فوج اس وقت شمالی وزیرستان اور خیبر کے علاوہ جنوبی وزیرستان میں بھی اپنی پوزیشنیں مستحکم کرنے میں مصروف ہے لیکن تشدد میں کمی کی بڑی وجہ انھی کارروائیوں کو مانا جا رہا ہے۔

اس سال مجموعی طور پر ان پرتشدد کارروائیوں میں ہلاک ہونے والے عام شہریوں اور سکیورٹی اہلکاروں کی تعداد میں بھی کمی آئی ہے۔

گذشتہ برس میں چھ سو سے زائد ایسی ہلاکتوں کی تعداد کم ہو کر تقریباً تین سو تک آ پہنچی ہے۔ حکام کے مطابق یہ تعداد سنہ 2008 کے بعد سے کم ترین سطح ہے۔

تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ دہشت گردی کے واقعات میں کمی پر خوشی کا اظہار قبل از وقت ثابت ہو سکتا ہے اور جب تک قبائلی علاقوں خصوصا خیبر ایجنسی میں شدت پسندی کا مکمل خاتمہ نہیں ہوتا، یہ کمی عارضی ثابت ہو سکتی ہے۔

اسی بارے میں