کراچی: رہنما کی ہلاکت پر ایم کیو ایم کا احتجاج

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption پاکستان کے صوبہ پنجاب کے شہر سیالکوٹ میں متحدہ قومی موومنٹ کے ضلعی نائب صدر باؤ محمد انور کو نامعلوم افراد نے فائرنگ کر کے ہلاک کر دیا تھا

متحدہ قومی موومنٹ نے سیالکوٹ میں تنظیم کے مقامی رہنما باؤ محمد انور کی ہلاکت کے خلاف کراچی میں احتجاجی مظاہرے کیے ہیں۔

ایم کیو ایم کی جانب سے بدھ کو کراچی میں کیے جانے والے ان مظاہروں کی وجہ سے بعض علاقوں میں کاروباری مراکز اور پیٹرول پمپ بند ہوگئے۔

دوسری جانب ایم کیو ایم کے سربراہ الطاف حسین نے باؤ محمد انور کے قتل پر رد عمل کا اظہار نہ کرنے پر تنظیم کے پالیسی ساز ادارے رابطہ کمیٹی کے اراکین کو سبکدوش کر دیا ہے۔

ایم کیو ایم کے سربراہ الطاف حسین نے بدھ کی صبح باؤ انور کی قتل کی مذمت کی اور متنبہ کیا کہ اگر پنجاب میں ان کے کارکنوں کا قتل نہ روکا گیا تو پنجاب کا کوئی بھی وزیر سندھ میں داخل نہیں ہو سکے گا۔

انھوں نے ایک بار پھر کراچی اور لندن کی رابطہ کمیٹیوں کو معطل کر دیا۔

الطاف حسین کا کہنا تھا کہ باؤ محمد انور کی ہلاکت پر محض ایک پریس ریلیز پر ہی اکتفا کیاگیا۔

انھوں نے کہا ’موجودہ رابطہ کمیٹی کے ارکان نے مجھے بہت مایوس کیا ہے۔ میں نے انھیں بہت موقعے دیے لیکن انھوں نے گراؤنڈ کے گراؤنڈ اور گلیاں بیچ دیں۔ اب مجھے ہر سیکٹر سے تعلیم یافتہ ایماندار اور بہادر فرد چاہئیں جو نہ صرف تحریک کی خاطر جان دینے کے لیے تیار ہوں بلکہ تحریک، کارکنان اور غریب عوام کے لیے آواز اٹھائیں۔‘

الطاف حسین کا کہنا تھا کہ حق پرست ارکانِ سینیٹ، قومی اور صوبائی اسمبلی کو جتنی تنخواہیں ملتی ہیں وہ عام کارکنوں کو نہیں ملتی تاہم وہ ’شہدا فنڈ‘ نہیں دیتے اور کہتے ہیں کہ ہمارا خرچہ پورا نہیں ہوتا۔

ایم کیو ایم کے سربراہ نے پارٹی میں گروہ بندی کی بھی نشاندہی کرتے ہوئے کہا کہ انھیں یہ بھی اطلاع ملی ہے کہ سیکٹر کے کچھ لوگ ان لوگوں سے رابطہ میں ہیں جنھوں نے تحریک کے بڑے عہدوں پر رہتے ہوئے نام کمائے لیکن آج وہ دبئی اور دیگرممالک میں اربوں روپے کما رہے ہیں لہذٰا ایسے عناصر انتظار نہ کریں اور فوراً ان مفاد پرستوں کے پاس چلے جائیں۔

خیال رہے کہ پاکستان کے صوبہ پنجاب کے شہر سیالکوٹ میں متحدہ قومی موومنٹ کے ضلعی نائب صدر باؤ محمد انور کو نامعلوم افراد نے فائرنگ کر کے ہلاک کر دیا تھا۔

یہ واقعہ منگل کی رات سیالکوٹ میں شہاب پورہ روڑ پر پیش آیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ باؤ محمد انور کو منگل کی رات اس وقت گولیاں ماری گئیں جب وہ اپنی دکان پر موجود تھے۔

اسی بارے میں