بلوچستان میں پولیس اہلکاروں پر بم حملوں میں ایک ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بلوچستان میں امن و امان کی صورتحال گذشتہ کئی سالوں سے خراب ہے

پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں پولیس اہلکاروں پر بم حملوں میں ایک پولیس اہلکار ہلاک اور ایک زخمی ہو گیا ہے۔

پولیس اہلکار کی ہلاکت کا واقعہ سنیچر کو خضدار شہر میں پیش آیا۔

خضدار پولیس کے ایک اہلکار نے بتایا کہ شہر میں زیرو پوائنٹ کے علاقے میں ایک ناکے پر دو پولیس اہلکار تعینات تھے۔

اس علاقے میں نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے ناکے پر تعینات پولیس اہلکاروں پر دستی بم پھینکا۔ دستی بم پھٹنے سے ایک اہلکار موقع پر ہلاک اور دوسرا شدید زخمی ہوگیا۔

زخمی اہلکار کو ابتدائی طبی امداد کے لیے مقامی ہسپتال منتقل کردیا گیا اور بعد میں بہتر سہولیات دستیاب نہ ہونے کی وجہ سے اسے کراچی منتقل کر دیا گیا۔ کوئٹہ کراچی شاہراہ پر واقع خضدار شہر کا شمار بلوچستان کے ان علاقوں میں ہوتا ہے جہاں طویل عرصے سے اس نوعیت کے واقعات پیش آ رہے ہیں۔

پولیس اہلکاروں پر دوسرا بم حملہ کوئٹہ شہر کے نواحی علاقے ہزارگنجی میں ہوا۔ کوئٹہ پولیس کے مطابق نامعلوم افراد نے کوئٹہ کراچی ہائی وے پر دھماکہ خیز مواد نصب کیا تھا۔

دھماکہ خیز مواد اس وقت پھٹ گیا جب پولیس کی معمول کی گشت کرنے والی دو گاڑیاں گزر رہی تھیں۔ چونکہ دھماکہ خیز مواد پولیس کی گاڑیاں نکلنے کے تھوڑی دیر بعد ہوا جس کے باعث کوئی نقصان نہیں ہوا۔

پولیس کے مطابق دھماکہ ریموٹ کنٹرول کے ذریعے کیا گیا جس میں پولیس کی گاڑیوں کو نشانہ بنایا گیا۔

کوئٹہ ہی میں سریاب کے علاقے برما ہوٹل کے قریب نامعلوم افراد نے ایک پولیس اہلکار کے گھر پر دستی بم سے حملہ کیا۔ چونکہ دستی بم پھٹ نہیں سکا جس کے باعث کوئی جانی اور مالی نقصان نہیں ہوا۔

اسی بارے میں