مہمند ایجنسی سے چھ افراد کی لاشیں برآمد

Image caption مہمند ایجنسی میں اس سے پہلے بھی لاشیں ملنے کے متعدد واقعات پیش آچکے ہیں

پاکستان کے قبائلی علاقے مہمند ایجنسی میں حکام کے مطابق یکہ غنڈ سے چھ لاشیں برآمد ہوئی ہیں جن کی شناخت کے لیے کوششیں جاری ہیں۔

مہمند کی پولیٹکل انتظامیہ نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ ان نامعلوم افراد کی لاشیں کوئی بانڈہ کے علاقے سے پیر کی صبح ملیں اور انھیں ایجنسی ڈسٹرکٹ ہسپتال غلنئی منتقل کر دیا گیا ہے۔

انتظامیہ کے اہلکار کے مطابق ہلاک شدگان کی شناخت کی کوشش کی جا رہی ہے۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ان افراد کی ہلاکت کی وجوہات بھی سامنے نہیں آ سکی ہیں اور اس سلسلے میں تحقیقات کی جا رہی ہیں۔

مہمند ایجنسی میں اس سے پہلے بھی لاشیں ملنے کے متعدد واقعات پیش آچکے ہیں جن میں سے بیشتر شدت پسند تنظیموں سے تعلق رکھنے والے جنگجوؤں کی نکلیں۔

شدت پسند تنظیم تحریک طالبان پاکستان اور اس کے ذیلی گروپ دعوے کرتے ہیں کہ یہ لاشیں ان کے جیلوں میں قید ساتھیوں کی ہیں جنھیں سکیورٹی فورسز مبینہ طور پر ہلاک کر رہی ہیں۔

خیال رہے کہ پاکستان میں شدت پسندوں کے خلاف سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں میں حالیہ تیزی کے بعد فاٹا کے علاوہ دیگر علاقوں سے بھی لاشیں ملنے کے واقعات میں اضافہ دیکھا گیا ہے۔

گذشتہ ہفتے کے دوران صوبہ بلوچستان کے ضلع زیارت سے کم از کم 15 افراد کی لاشیں مل چکی ہیں جبکہ نوشہرہ میں بھی رواں ماہ چھ افراد کی لاشیں ملی تھیں جنھیں گولی مار کر ہلاک کیا گیا تھا۔

اسی بارے میں