راولپنڈی: پھانسیوں پر حکمِ امتناع خارج، سزائیں برقرار

تصویر کے کاپی رائٹ LAHORE
Image caption پھانسی روکنے کے عدالتی فیصلے کو وفاقی حکومت کی جانب سے چیلنج کیا گیا تھا

لاہور ہائیکورٹ کے راولپنڈی بینچ نے سزائے موت کے پانچ قیدیوں کی سزا پر عملدرآمد روکنے کے احکامات کے خلاف حکومتی اپیل منظور کر لی ہے۔

سنہ 2012 میں گجرات میں ایک فوجی کیمپ پر حملے کا جرم ثابت ہونے پر احسان عظیم، عمر ندیم، آصف ادریس، کامران اسلم اور عامر یوسف نامی افراد کو سزائے موت سنائی گئی تھی۔

وزیرِ اعظم کی جانب سے حال ہی میں دہشت گردی کے مجرموں کی سزائے موت پر عمل درآمد پر عائد پابندی ہٹانے کے بعد ان افراد نے عدالت میں درخواست دی تھی۔

فوری پھانسیاں قانون کے پھندے میں آ گئیں

اس پر جج جسٹس ارشد تبسم نے پیر کو ان پانچوں قیدیوں کی سزا پر عملدرآمد روکنے کا حکم دیا تھا۔

وزیرِ اعظم کے اس حکم کے بعد عدالتی فیصلے کو وفاقی حکومت کی جانب سے چیلنج کر دیا گیا تھا۔

بدھ کو اس معاملے کی سماعت راولپنڈی میں ہوئی اور جج ارشد تبسم نے مختصر سماعت کے بعد حکومتی درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا جو کہ دوپہر ڈھائی بجے سنایا گیا۔

اپنے مختصر فیصلے میں عدالت نے حکمِ امتناع ختم کرنے کا اعلان کیا اور کہا کہ مجرموں کو سزا قانون کے تمام تقاضے پورے کرنے کے بعد دی گئی۔

اس فیصلے کے بعد ان افراد کی سزا پر عمل درآمد کی راہ میں حائل رکاوٹ دور ہوگئی ہے اور دوبارہ ڈیتھ وارنٹ جاری ہونے کے بعد انھیں پھانسی دی جا سکے گی۔

بدھ کو سماعت کے دوران ڈپٹی اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ نہ صرف ان مجرموں پر منصفانہ مقدمہ چلا بلکہ انھیں اپیل کا حق بھی دیا گیا تھا جو انھوں نے استعمال کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سانحۂ پشاور کے بعد وزیرِ اعظم نواز شریف دہشت گردی کے مقدمات میں سزائے موت پر عمل درآمد پر عائد پابندی ختم کر دی تھی

تاہم مجرمان کے وکیل کا کہنا تھا کہ ان کے موکل تو یہ بھی نہیں جانتے کہ انھیں کس جرم میں سزا دی گئی ہے۔

مجرمان کے وکیل نے یہ بھی کہا کہ ابھی تک کورٹ مارشل کے فیصلے اور آرمی چیف کی طرف سے اُن کے موکلین کو پھانسی دینے کی منظوری کی دستاویزات نہ تو ابھی تک عدالت میں پیش کی گئی ہیں اور نہ ہی ملزمان کو دی گئی ہیں۔

اس پر ڈپٹی اٹارنی جنرل کا کہنا تھا کہ حساس دستاویزات ہیں اور ایسے شواہد کو عدالت میں پیش کرنا مفاد عامہ میں نہیں ہے۔

اس معاملے میں حکومتی درخواست میں کہا گیا تھا کہ ان پانچ مجرمان کو فوجی کیمپ پر فائرنگ کر کے سات اہلکاروں کو ہلاک کرنے کے مقدمے میں فروری 2014 میں موت کی سزا سنائی گئی تھی۔

درخواست میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ فوجی عدالت ان مجرمان کی طرف سے دائر کی گئی اپیلیں جون 2014 میں مسترد کر چکی ہے۔

یہ پانچوں قیدی اس وقت کوٹ لکھپت جیل لاہور میں قید ہیں۔

خیال رہے کہ مذکورہ پانچ قیدیوں میں سے دو احسان عظیم اور عمر ندیم کے نام ان 17 قیدیوں کی فہرست میں شامل ہیں جنھیں پہلے مرحلے میں دہشت گردی کے جرائم میں سزائے موت دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption پشاور میں سکول پر طالبان کے حملے میں 134 طلبا اور عملے کے نو ارکان ہلاک ہوئے ہیں

سزائے موت کی بحالی پر یورپی یونین کی مذمت

ادھر یورپی یونین نے پاکستان کی جانب سے سزائے موت دیے جانے پر عائد پابندی اٹھانے کی مذمت کرتے ہوئے پابندی کی بحال کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

پاکستان میں یورپی یونین کے مشن کی جانب سے جاری ہونے والے بیان میں سانحۂ پشاور کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ وہ غم کی اس گھڑی میں پاکستان کے ساتھ ہے لیکن مجرمان کو سزائے موت دینے کی حامی نہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ’ہم سمجھتے ہیں کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں سزائے موت موثر ہتھیار نہیں۔‘

یورپی ممالک کی تنظیم کی جانب سے پاکستانی حکومت کے سزائے موت دیے جانے کے فیصلے پر افسوس اور مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے یہ امید بھی ظاہر کی گئی ہے کہ پاکستان جلد از جلد پابندی بحال کر دے گا۔

17 دسمبر کو پشاور میں آرمی پبلک سکول پر حملے کے اگلے ہی دن وزیرِ اعظم نواز شریف نے دہشت گردی کے مقدمات میں سزائے موت پانے والے مجرموں کی سزا پر عمل درآمد پر عائد پابندی ختم کرنے کا اعلان کیا تھا۔

اس اعلان کے بعد اب تک جی ایچ کیو پر حملے کے ایک مجرم محمد عقیل عرف ڈاکٹر عثمان اور سابق صدر پرویز مشرف پر حملے کے پانچ مجرمان سابق نائیک ارشد محمود، غلام سرور بھٹی، راشد محمود قریشی عرف ٹیپو، زبیر احمد اور اخلاص روسی کو فیصل آباد میں پھانسی دی جا چکی ہے۔

اسی بارے میں