راولپنڈی میں ٹارگٹ کلنگ، تین شیعہ افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption تفتیشی افسر عبدالرزاق نے بتایا کہ یہ تینوں افراد رات گئے مجلس سے واپس آ رہے تھے اور جب وہ اپنے مکان کے سامنے پہنچے ہیں تو ان کو گولیاں مار کر ہلاک کردیا گیا

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے شہر راولپنڈی میں پولیس کے مطابق جمعہ اور ہفتے کی درمیانی شب کو تین شیعہ افراد کو گولیاں مار کر ہلاک کردیا گیا ہے۔

پولیس کے مطابق یہ واقعہ راولپنڈی کے علاقے چرا روڈ پر پیش آیا۔

صادق آباد تھانے کے تفتیشی افسر عبدالرزاق نے بی بی سی اردو کو بتایا کہ 40 سالہ ایڈووکیٹ فیاض حسین شاہ اپنے بھانجے میر غازی اور بھتیجے میر حمزہ شاہ کے ہمراہ جب اپنے مکان پر پہنچے ہیں تو ان کو گولیاں مار کر ہلاک کردیا گیا۔

پولیس کے مطابق ان تینوں افراد کا تعلق شیعہ مسلک سے تھا۔

تفتیشی افسر عبدالرزاق نے بتایا کہ یہ تینوں افراد رات گئے مجلس سے واپس آ رہے تھے اور جب وہ اپنے مکان کے سامنے پہنچے تو ان کو گولیاں مار کر ہلاک کردیا گیا۔

ایڈووکیٹ فیاض حسین شاہ کے بارے کہا جاتا ہے کہ وہ اہلِ تشیع برادری میں بہت متحرک تھے اور پاکستان تحریک انصاف کے بھی مقامی رہنما تھے۔

پولیس کے مطابق میر غازی اور میر حمزہ شاہ کی عمریں 20 اور 22 سال کے درمیان تھیں۔

یاد رہے کہ آٹھ جنوری کو راولپنڈی کی امام بارگاہ ابو محمد رضوی میں خودکش دھماکے کے نتیجے میں سات افراد ہلاک اور 15 زخمی ہوگئے تھے۔

ابو محمد رضوی کی امام بارگاہ میں دھماکہ اس وقت ہوا جب وہاں محفلِ میلاد جاری تھی۔

ریجنل پولیس آفیسر اختر عمر حیات لالیکا کے مطابق حملہ آور نے امام بارگاہ کے مرکزی دروازے پر آ کر موٹرسائیکل روکی اور اندر داخل ہونے کی کوشش کی تاہم ڈیوٹی پر موجود سکیورٹی گارڈ نے اسے اندر جانے سے روکا جس پر اس نے خود کو دھماکہ خیز مواد سے اڑا لیا۔

اسی بارے میں