واہ: چیک پوسٹ کے قریب دھماکہ، مشتبہ شخص ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption دہشت گردی کے خدشات کی وجہ سے ملک میں حفاظتی انتظامات سخت کر دیے گئے ہیں

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے شہر واہ کے قریب ہونے والے دھماکے میں ایک مشتبہ شخص ہلاک ہوگیا ہے۔

راولپنڈی کے ریجنل پولیس افسر عمر اختر حیات لالیکا نے بی بی سی اردو کو بتایا کہ یہ واقعہ منگل کو راولپنڈی سے 25 کلومیٹر دور واہ گارڈن کے قریب پیش آیا۔

ان کا کہنا تھا کہ پولیس نے علاقے میں ناکہ لگایا ہوا تھا جس پر پشاور سے راولپنڈی آنے والی ایک بس کو روکا گیا۔

آر پی او کے مطابق بس میں موجود ایک مسافر کو مشکوک ہونے کی بنیاد پر نیچے اتارا گیا تو اس سے اترتے ہی چیک پوسٹ پر موجود اہلکاروں پر دستی بم پھینک دیا۔

ان کا کہنا تھا کہ اس حملے کے وقت ناکے پر چھ اہلکار موجود تھے لیکن اس میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔

عمر لالیکا کے مطابق بم پھینکنے کے بعد اس شخص نے قریبی کھیتوں کی جانب دوڑ لگا دی۔

پولیس کی جانب سے تعاقب کیے جانے پر اس نے دھماکہ کر دیا جس میں وہ خود ہلاک ہو گیا۔

دھماکے کی نوعیت کے بارے میں ابھی حتمی طور پر کچھ نہیں کہا گیا ہے، تاہم پولیس کے مطابق مذکورہ شخص کے پاس بظاہر ایک اور دستی بم بھی تھا اور فرار کی راہ نہ پا کر اس نے اس کا بھی دھماکہ کر دیا۔

مقامی پولیس کے مطابق اس واقعے میں ہلاک ہونے والے شخص کی عمر 25 سے 30 برس کے درمیان ہے اور اس کی شناخت کی کوششیں کی جا رہی ہیں۔

یہ راولپنڈی ریجن کی حدود میں رواں ماہ ہونے والا دوسرا دھماکہ ہے۔ اس سے قبل نو جنوری کو راولپنڈی کی امام بارگاہ ابو محمد رضوی میں خودکش دھماکے کے نتیجے میں سات افراد ہلاک ہوئے تھے۔

خیال رہے کہ گذشتہ ماہ پشاور میں طالبان کے حملے کے ردعمل میں حکومتی کارروائیوں کے بعد سے ملک میں دہشت گردی کی کارروائیوں کا خطرہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔

حکومت کی جانب سے اس سلسلے میں عوام کو محتاط رہنے اور اپنے گردوپیش پر نظر رکھنے کی ہدایات جاری کی گئی ہیں۔

اسی بارے میں