’قانون بارود والوں کے لیے، اطلاق درود والوں پر‘

تصویر کے کاپی رائٹ bbc
Image caption خواجہ فرید امن میلہ بھی لاوڈ سپیکر کے استعمال کے بارے میں قانون کی زد میں آ گیا۔

پاکستان کے صوبہ پنجاب میں یہ احساس تقویت پا رہا ہے کہ حال ہی میں نافذ کیا گیا ساؤنڈ سسٹم آرڈیننس شدت پسندوں کی بجائے اعتدال پسندوں کی آزادیِ اظہار کے گردگھیرا تنگ کر رہا ہے۔ البتہ حُکام کے اقدامات سے تاثر ملتا ہے کہ ملک میں پہلی مرتبہ مذہب کے ساتھ ساتھ خوشیاں منانے اور روزی کمانے کے نام پر ہونے والی ’شور‘ سے بھی نمٹا جا رہا ہے۔

پشاور میں سولہ دسمبر کو آرمی پبلک سکول پر حملے کے ردعمل میں دہشتگردی کے خلاف اپنائے گئے قومی لائحہ عمل کے تحت، حکومتِ پنجاب نے جنوری میں پانچ آرڈیننس نافذ کیے جن میں سے ایک پنجاب ساؤنڈ سسٹم آرڈیننس ہے۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

جنوبی پنجاب میں ’خواجہ فرید امن میلہ‘ کے عنوان سے ثقافتی شامیں منعقد کرانے والی غیر سرکاری تنظیم پنجاب لوک سُجاگ بھی اِس قانون کے شکنجے میں آئی۔ تنظیم کے رکن کے اطہر لاشاری بتاتے ہیں کہ ’بہاولپور میں ہم نے ضلعی انتظامیہ سے اجازت لی تھی۔ اُس کے باوجود ساؤنڈ سسٹم آرڈیننس کے تحت ہمیں دشواری کا سامنا کرنا پڑا۔ مجھے گرفتار کیا گیا۔ ساؤنڈ کے دوستوں کو گرفتار کیا گیا۔ ہمارا ساؤنڈ سسٹم پولیس نے قبضے میں لے لیا۔ ہم نے جرمانے ادا کیے اور رہا ہوئے۔‘

بعد میں پنجاب لوک سُجاگ کو لودھراں میں میلے کی اجازت اِس یقین دہانی پر ملی کہ ساؤنڈ سسٹم کی گونج پنڈال سے باہر جائے گی نہ شکایت آئے گی۔ کوئی دو ہزار لوگوں کے لیے اِتنے کم سپیکر لگائے گئے کہ آواز آخری صفوں میں بیٹھے شرکاء کو بمشکل پہنچ رہی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ bbc
Image caption پشاور میں آرمی پبلک سکول پر حملے کے بعد سے یہ قانون نافذ کیا گیا تھا

اطہر لاشاری مایوس ہیں کہ وہ صوفیانہ کلام، شدت پسندی کے خلاف سٹیج ڈراموں اور ثقافتی موسیقی کے ذریعے ’امن اور ہم آہنگی‘ کا پرچار کر رہے تھے جب اُن کے خلاف قانونی کارروائی ہوئی۔

صوبے بھر میں اِس آرڈیننس کے تحت ایک ماہ میں تقریباً ڈھائی ہزار مقدمات درج ہوئے ہیں۔ ’شور‘ کی شکایات میں بھی غیر معمولی اضافہ ہوا ہے۔ آرڈیننس کے نفاذ کے بعد سے بہاولپور میں پولیس کی ہیلپ لائن ون فائیو پر 55 شکایات موصول ہوئیں جن پر ’شور‘ کے زُمرے میں آنے کے تحت عمل درآمد ہوا۔ حُکام کے مطابق، ماضی میں ایک ماہ میں ایسی اِکا دُکا شکایات آتی تھیں اور دوٹوک قانون کی عدم موجودگی کے سبب پولیس کے لیے اِن کا ازالہ کرنا بھی مشکل تھا۔

عمومی تاثر یہ ہے کہ پاکستان میں شدت پسندی، فرقہ واریت اور منافرت پر مبنی تبلیغ پر قابو پانے کے لیے صرف مساجد میں سپیکروں کے استعمال پر قابو پانے کی ضرورت ہے۔ لیکن پنجاب میں، میلے، مساجد، مدرسے، شادیاں اور کاروبار، سپیکر لگانے والے اور بجانے والے، سبھی ساؤنڈ سسٹم آرڈیننس کی گرفت میں آئے ہیں۔ زیادہ تر مقدمات اور جُرمانے مساجد کے خطیبوں پر ہوئے۔

بہاولپور کی جامعہ مسجد سیرانی کے خطیب صاحبزادہ ریاض احمد اویسی صفِ اول کے علماء میں سے ہیں جنہیں پچیس ہزار روپے جُرمانہ ہوا۔ وہ اِس آرڈیننس کو ’امتیازی‘ قرار دیتے ہیں۔

’جن لوگوں نے تخریب کاری کی بات کرنی ہے، وہ آج بھی کر رہے ہیں مسجد میں۔ قانون بنا ہے بارود والوں کے لیے، یہ درود والوں پر استعمال کر رہے ہیں۔ قانون بنا ہے بم والوں کے لیے، یہ دم والوں پر استعمال کر رہے ہیں۔ قانون بنا ہے فساد والوں کے لیے، یہ میلاد پر کر رہے ہیں۔ تو آپ امتیاز پیدا کر رہے ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ bbc
Image caption اس قانون کے تحت پولیس کئی ہزار مقدمات درج کر چکی ہے

کئی مساجد میں اردو اور عربی درودوسلام بیرونی سپیکروں پر عام پڑھا جاتا ہے۔ حسبِ ضرورت اعلانات، نعت خوانی، حمد و ثناء اور چندے کے لیے بھی مساجد کے بیرونی سپیکر استعمال کیے جاتے ہیں۔ جبکہ ساؤنڈ سسٹم آرڈیننس کے تحت صرف مخصوص مقاصد کے لیے ہی مساجد کے بیرونی سپیکروں کو استعمال کرنے کی اجازت ہے۔

صاحبزادہ ریاض اویسی کے مطابق، حُکام نے مساجد کے میناروں پر نصب سپیکروں کی تعداد چار سے کم کرکے ایک کرنے کی ہدایت کی ہے جس سے اُن کے بقول مذہبی فرائص کی ادائیگی متاثر ہورہی ہے۔

’نمازیوں کی تعداد کم ہو گی۔ مقصد ہے اذان دینا۔ اذان جب چاروں طرف جائے گی۔ حدیث پاک کی رُو سے اذان دینے سے شیطان بھی چھتیس میل دور بھاگ جاتا ہے۔ یہ حکمران کیا چاہتے ہیں کہ ایک طرف اذان جائے، باقی شیطان بیٹھا رہے۔ باقی لوگ نماز پڑھنے کے لیے نہ آئیں؟‘

تصویر کے کاپی رائٹ bbc
Image caption بہاولپور کی ایک مسجد کے خطیب ریاض اویسی پر 25 ہزار جرمانہ ہوا تھا

بہاولپور کے ریجنل پولیس افسر ڈی آئی جی احسان صادق کا موقف ہے کہ مذہب، ثقافت یا کاروبار، ہر مقصد کے لیے سپیکر کے استعمال کو کسی قانون کے دائرے میں آنا ہے۔

’گلی محلوں میں، دکانوں میں، ریڑھیوں پر، کاروں پر کوئی چیز فروخت کرنے کے لیے، حتیٰ کہ مساجد میں بھی۔ لوگ سمجھتے تھے کہ یہ ہماری زندگی کا حصہ ہے۔ لیکن بہت سے لوگوں کے لیے قابلِ اعتراض تھا۔ یہ چھوٹی چھوٹی چیزیں ہیں۔ جیسے وال چاکنگ ہے۔ نفرت انگیز مواد کی تقسیم ہے یا لاؤڈ سپیکر کا استعمال ہے۔ اِن چیزوں نے گزشتہ سالوں میں ایسے معاشرے میں کردار ادا کیا ہے جہاں آج بدقسمتی سے ہم ہیں۔"

اظہار جو ہو، جیسا ہو، جس انداز میں ہو، اِس کی گونج چار دیواری کے اندر محدود کر دی گئی ہے۔ پنجاب ساؤنڈ سسٹم آرڈیننس پر پولیس کے بلا امتیاز عمل درآمد نے ایسے سپیکر نوے دنوں کے لیے خاموش کرا دیے ہیں جن سے عربی کے علاوہ نکلنے والی آواز تیس فُٹ کی قانونی حد سے باہر سنائی دے اور دوسروں کے لیے دل آزاری یا کوفت کا سبب بنے۔

اسی بارے میں