خیبر ایجنسی: جمرود بائی پاس پر دھماکہ، دو اہلکار زخمی

Image caption خیبر ایجنسی میں اکتوبر 2014 میں آپریشن شروع ہوا تھا

پاکستان کے قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں جمرود بائی پاس پر نصب بم پھٹنے سے ڈیوٹی پر موجود دو خاصہ دار زخمی ہوگئے۔

خیبر ایجسنی کے پولیٹیکل ایجنٹ کے دفتر کے مطابق اتوار کی صبح تحصیل جمرود کے بائی پاس پر بم کا دھماکہ ہوا۔

’واقعے میں دو خاصہ دار معمولی زخمی ہوئے، جنھیں ابتدائی طبی امداد دے دی گئی ہے۔‘

انتظامی اہلکار کے مطابق جمرود بائی پاس پر علاقے میں داخل ہونے والوں کی چیکنگ کی جاتی ہے تاہم یہ علاقہ زیادہ گنجان آباد نہیں ہے۔

یاد رہے کہ خیبر ایجنسی میں ہی گذشتہ سال اکتوبر میں خیبر ون کے نام سے باقاعدہ فوجی آپریشن شروع کیا گیا تھا جبکہ اس سے پہلے بھی وادی تیراہ میں سکیورٹی فورسز کی کارروائیاں جاری تھیں۔

خیبر ایجنسی تین سب ڈویژنوں باڑہ، جمرود اور لنڈی کوتل پر مشتمل ہے۔ پاکستانی فوج نے شمالی وزیرستان میں جاری آپریشن ضربِ عضب سمیت آپریشن خیبر ون کے حوالے سے کہا ہوا ہے کہ ان علاقوں میں اس وقت تک فوج کی کارروائیاں جاری رہیں گی جب تک وہاں سے دہشت گردوں کا مکمل حاتمہ نہیں ہوجاتا۔

اس فوجی آپریشن اور سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں کی وجہ سے مختلف علاقوں سے لوگوں نے نقل مکانی بھی کی ہے۔

اسی بارے میں