یومِ پاکستان پر نریندر مودی کی مبارک باد

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption پاکستانی فوج کے سپیشل سروسز گروپ کے ایک دستے نے بھی پریڈ میں حصہ لیا

پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد میں فیض آباد انٹرچینج کے قریب پیر کو یومِ پاکستان کے موقعے پر سات برس کے وقفے کے بعد مسلح افواج کی پریڈ منعقد ہوئی۔ اس موقعے پر شہر بھر میں سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے۔

اس تقریب کے مہان خصوصی صدر ممنون حسین تھے، جب کہ وزیرِ اعظم نواز شریف، وزیرِ دفاع خواجہ آصف، چیف آف آرمی سٹاف جنرل راحیل شریف اور ملک کی دیگر اعلیٰ سیاسی و عسکری قیادت نے بھی شرکت کی۔

اس موقعے پر بھارتی وزیرِ اعظم نریندر مودی نے نواز شریف کو مبارک باد کا پیغام بھیجا ہے۔ نریندر مودی نے سماجی ویب سائٹ ٹوئٹر پر لکھا کہ ’میں نے پاکستان کے قومی دن کے موقعے پر پاکستانی وزیرِ اعظم کو مبارک باد کا پیغام بھیجا ہے۔‘

انھوں نے مزید کہا: ’میرا اس بات پر پختہ یقین ہے کہ تمام حل طلب مسائل دہشت اور تشدد سے پاک فضا میں دو طرفہ بات چیت سے حل کیے جا سکتے ہیں۔‘

صدرِ پاکستان ممنون حسین نے کھلی جیپ میں سوار ہو کر فوجی دستوں کا معائنہ کیا۔ پاکستان ایئر فورس کے طیاروں نے فلائی پاسٹ پیش کیا، جن کی قیادت ایئر چیف مارشل سہیل امان نے کی۔ فلائی پاسٹ میں بحریہ کے اورائن طیارے نے بھی شرکت کی۔

اس موقعے پر سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے اور اسلام آباد اور اس کے جڑواں شہر راولپنڈی میں’ریڈ الرٹ‘ نافذ کیا گیا تھا۔

دن کا آغاز وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں 31 توپوں، جب کہ صوبائی دارالحکومتوں میں 21، 21 توپوں کی سلامی سے ہوا۔

دارالحکومت کے تمام داخلی و خارجی راستوں اور اہم شاہراہوں پر پولیس اور رینجرز تعینات ہیں جبکہ حساس عمارتوں کی حفاظت کی ذمہ داری پاکستانی فوج کو سونپی گئی تھی۔

پریڈ کے موقعے پر اسلام آباد اور راولپنڈی میں پیر کی صبح چھ بجے سے دوپہر دو بجے تک موبائل فون سروس بھی معطل رہی۔

پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی کے مطابق یہ فیصلہ سکیورٹی انتظامات کے سلسلے میں کیا گیا تھا۔ اس سے قبل سنیچر کو پریڈ کی فل ڈریس ریہرسل کے موقع پر بھی موبائل سروس معطل کی گئی تھی۔

اسلام آباد کی ضلعی انتظامیہ وفاقی حکومت کے احکامات کے بعد 18 مارچ سے ہی شکر پڑیاں کےگردونواح میں واقع 40 سے زائد دینی مدارس اور مزاروں کو بند کروا چکی ہے جو 24 مارچ تک بند رہیں گے۔

جن علاقوں میں مدارس بند کیے گئے ہیں اُن میں سیکٹر جی سکس، جی سیون، آئی ایٹ، آئی نائن، ایچ ایٹ اور ایچ نائن کے علاوہ مری روڈ اور مارگلہ ٹاؤن شامل ہیں۔

سول ایوارڈز کا اعلان

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption شکر پڑیاں کےگردونواح میں واقع 40 سے زائد دینی مدارس اور مزار 24 مارچ تک بند رہیں گے

ایوانِ صدر سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق صدرِ پاکستان پیر کی شام یومِ پاکستان کے موقعے پر ایوانِ صدر میں منعقد ہونے والی تقریب میں نو غیر ملکیوں اور بیرونِ ملک مقیم پاکستانیوں سمیت 52 افراد کو مختلف سول ایوارڈز بھی دیں گے۔

بیان میں بتایا گیا ہے کہ پیر کو ہی پشاور میں گذشتہ برس دسمبر میں طالبان کے حملے میں ہلاک ہونے والے 122 طلبہ اور ان کے 20 اساتذہ کو بھی بعد از مرگ ایوارڈ دیے جائیں گے۔

اس کے علاوہ سندھ، پنجاب، خیبر پختونخوا اور بلوچستان کے گورنر بھی 86 افراد کو صدر کی جانب سے سول ایوارڈ دیں گے۔

اسی بارے میں