آیان علی کی جیل میں بی کلاس کی درخواست مسترد

Image caption ملزمہ برقعے میں عدالت میں پیش ہوئیں اور جب تک وہ کمرہ عدالت میں موجود رہیں انھوں نے برقعہ نہیں اتارا

راولپنڈی کی ایک مقامی عدالت نے منی لانڈرنگ کے مقدمے میں ماڈل آیان علی کو جیل میں بی کلاس دینے کی درخواست مسترد کردی ہے۔

عدالت کا کہنا ہے کہ کسٹم ایکٹ کے تحت گرفتار ہونے والے ملزمان کو جیل میں بی کلاس نہیں دی جاسکتی اور اس کا اطلاق فوجداری دفعات کے تحت درج ہونے والے مقدمات پر ہوتا ہے۔

جیل قواعد کے مطابق ہر اس ملزم کو بی کلاس ملتی ہے جس کی تعلیم بی اے یا اس سے زیادہ ہوتی ہے اور اس کلاس میں ملزم کو ایک خدمت گذار یعنی مشقتی بھی فراہم کیا جاتا ہے۔

سنیچر کے روز آیان علی کو سخت سکیورٹی کے حصار میں راولپنڈی کی اڈیالہ جیل سے سپیشل جج سینٹرل کی عدالت میں پیش کیا گیا۔

ملزمہ کو اڈیالہ جیل سے قیدیوں کی وین میں کچہری کے احاطے میں لایا گیا بعدازاں پولیس کے بقول آیان علی کی درخواست پر انھیں کچہری کے احاطے سے کمرہ عدالت تک ایک نجی گاڑی میں لایا گیا۔

ملزمہ برقعے میں عدالت میں پیش ہوئیں اور جب تک وہ کمرہ عدالت میں موجود رہیں انھوں نے برقعہ نہیں اُتارا۔

عدالت نے ملزمہ سے استفسار کیا کہ کیا انھیں جیل میں ملنے والی سہولتیں نامناسب ہیں جس کا انھوں نے نفی میں جواب دیا اور کہا کہ وہ جیل میں ملنے والی ان سہولتوں سے مطمئن ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption کسٹم حکام نے آیان علی کو 14 مارچ کو اُس وقت گرفتار کرلیا جب وہ پانچ لاکھ امریکی ڈالر لے کر دوبئی جارہی تھیں

آیان علی نے عدالت کو بتایا کہ وہ جیل میں صرف اپنے بھائی اور وکلا سے ملنا چاہتی ہیں جبکہ انھوں نے اپنے والد سے بھی ملنے سے انکار کردیا۔

مقامی پولیس کے مطابق ملزمہ کے والد راجہ حفیظ پر نامعلوم مسلح افراد نے سنیچر کو اس وقت فائرنگ بھی کی جب وہ گوجر خان سے آیان علی کے مقدمے کی سماعت کے لیے راولپنڈی آرہے تھے۔

پولیس کے مطابق ایک گولی ملزمہ کے والد کے کندھے کو چھو کر گزری ہے۔

اس مقدمے کے تفتیشی افسر نے عدالت کو بتایا کہ اس مقدمے کی تفتیش ابھی جاری ہے اور ابھی تک ایسے شواہد سامنے نہیں آئے جس سے یہ ثابت ہوتا ہو کہ ملزمہ سے برآمد ہونے والی پانچ لاکھ ڈالر کی رقم آیان علی کی ہی ہے۔

واضح رہے کہ کسٹم حکام نے آیان علی کو 14 مارچ کو اُس وقت گرفتار کرلیا جب وہ پانچ لاکھ امریکی ڈالر لے کر دوبئی جارہی تھیں۔

عدالت نے ملزمہ کو 11 اپریل کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیا۔ ذرائع ابلاغ کی ایک خاصی تعداد آیان علی کے مقدمے کی سماعت کے لیے کمرہ عدالت میں موجود تھی۔

اُدھر لاہور ہائی کورٹ راولپنڈی بینچ نے ملزمہ آیان علی کی ضمانت کی درخواست کی سماعت کے لیے 31 مارچ کی تاریخ مقرر کی ہے اور تفتیشی افسر سے کہا ہے کہ وہ مقدمے کا ریکارڈ عدالت میں پیش کریں۔

اسی بارے میں