’تیراہ میں شدید لڑائی، 15 دہشت گرد ہلاک‘

Image caption اعدادوشمار کے مطابق خیبر ٹو آپریشن میں 120 سے زائد شدت پسند ہلاک ہو چکے ہیں

پاکستانی فوج کا کہنا ہے کہ خیبر ایجنسی کی وادیِ تیراہ میں فوج اور دہشت گردوں کے درمیان شدید لڑائی کے نتیجے میں 15 دہشت گرد ہلاک ہوئے ہیں۔

فوج کے شعبہ تعلقاتِ عامہ آئی ایس پی آر کے مطابق تیراہ میں فوج کی زمینی کارروائی میں ہلاک کیے گئے دہشت گردوں میں سے دس کی لاشیں سکیورٹی فورسز کی تحویل میں ہیں۔

آئی ایس پی آر کی جانب سے سنیچر کی صبح جاری ہونے والے بیان میں بتایا گیا ہے کہ یہ کارروائی مستگ چیک پوسٹ کے نواح میں 30 سے 35 دہشت گردوں کی موجودگی کی اطلاع پر کی گئی۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ مستگ موجود سکیورٹی اہلکاروں نے دہشت گردوں کو گھیرے میں لیا جس کے بعد شدید لڑائی کا آغاز ہوگیا۔

اس کارروائی میں سکیورٹی فورسز نے 15 دہشت گردوں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

بیان کے مطابق کارروائی میں سکیورٹی فورسز کے تین اہلکار بھی زخمی ہوئے ہیں جبکہ دس دہشت گردوں کی لاشوں کو اسلحے سمیت تحویل میں لے لیا گیا ہے۔

یاد رہے کہ 23 مارچ کو آئی ایس پی آر نے یہ دعویٰ بھی کیا تھا کہ فوج نے تیراہ میں مستول سرنگ پر قبضہ کر لیا ہے، جسے دہشت گرد خیبر ایجنسی سے افغانستان آنے جانے کے لیے استعمال کیا کرتے تھے۔

آئی ایس پی آر نے حال ہی میں خیبر ٹو آپریشن میں ہلاک ہونے والے دہشت گردوں کی مجموعی تعداد 80 بتائی تھی اور کہا تھا کہ اب تک زخمی ہونے والے دہشت گردوں کی تعداد 100 سے زائد ہے۔

اسی بارے میں