کوئٹہ کے نواح سے چار مبینہ خودکش حملہ آورگرفتار

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption گرفتار افراد کا تعلق کالعدم شدت پسند مذہبی تنظیم سے ہے

پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں سکیورٹی اہلکاروں نے دارالحکومت کوئٹہ کے قریب سے چار خودکش حملہ آوروں سمیت گیارہ شدت پسندوں کو گرفتار کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

کوئٹہ میں سکیورٹی حکام کے مطابق شدت پسندوں کو کچلاک سے گرفتار کیا گیا۔

حکام کا کہنا ہے کہ کچلاک میں ایک کالعدم مذہبی شدت پسند تنظیم سے تعلق رکھنے والے افراد کی موجودگی کی اطلاع پر سکیورٹی اہلکاروں نے سرچ آپریشن کیا۔

حکام کے مطابق سرچ آپریشن کے دوران علاقے سے 11 شدت پسندوں کو گرفتار کیا گیا جو مبینہ طور پر کوئٹہ میں تخریب کاری کا منصوبہ بنا رہے تھے۔

سکیورٹی حکام نے نام ظاہر نہ کرنے پر بتایا کہ گرفتار ہونے والے شدت پسندوں میں چار خود کش حملہ آور بھی شامل ہیں جبکہ اسلحہ اور گولہ بارود بھی برآمد ہوا ہے۔

گرفتار کیے جانے والے شدت پسندوں سے تحقیقات کی جا رہی ہیں تاہم حکام نے شدت پسند مذہبی تنظیم کا نام ذرائع ابلاغ میں ظاہر نہیں کیا۔

کچلاک کوئٹہ شہر سے شمال میں 30 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے اور اس علاقے کی آبادی مختلف پشتون قبائل پر مشتمل ہے۔

اس علاقے سے پہلے بھی سکیورٹی فورسز نے تلاشی کی کارروائیوں میں متعدد افراد کو گرفتار کیا ہے۔

واضح رہے کہ دو روز قبل سکیورٹی فورسز نے ضلع لورالائی اور ضلع زیارت کے علاقے سنجاوی میں سرچ آپریشن کیا تھا۔

اس سرچ آپریشن میں حکام نے کالعدم مذہبی شدت پسند تنظیم سے تعلق رکھنے والے شدت پسندوں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا گیا تھا۔

بلوچستان میں کالعدم لشکر جھنگوی کئی بار شدت پسندی کے واقعات کی ذمہ داری قبول کرنے کا اعلان کر چکی ہے۔

اسی بارے میں