تحریکِ انصاف کی اسمبلی میں واپسی عدالت میں چیلنج

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption حکمران جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز کے سابق سینیٹر سید ظفر علی شاہ نے یہ درخواست دائر کی ہے

اسلام آباد ہائی کورٹ نے پاکستان تحریک انصاف کے ارکان قومی اسمبلی کے استعفے منظور کرنے سے متعلق درخواست ابتدائی سماعت کے لیے منظور کرلی ہے۔

جسٹس اطہر من اللہ کی سربراہی میں اسلام آباد ہائی کورٹ کا دو رکنی بینچ آٹھ اپریل سے اس درخواست کی سماعت کرے گی۔

حکمران جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز کے سابق سینیٹر سید ظفر علی شاہ نے یہ درخواست دائر کی ہے۔

اس درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ پاکستان تحریک انصاف کےمتعدد اراکین قومی اسمبلی نے اپنے استعفے قومی اسمبلی کے سپیکر کو پیش کردیے تھے لیکن اس کے بعد وہ دوبارہ قومی اسمبلی میں چلے گئے ہیں لہذا عدالت قومی اسمبلی کے سپیکر کو حکم جاری کرے کہ وہ ان ارکان اسمبلی کے استعفے منظور کریں۔

درخواست میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ ایسی صورت حال میں قومی اسمبلی سیکرٹریٹ کے حکام کو بھی یہ حکم دیا جائے کہ وہ مستعفیٰ ہونے والے ان ارکان کی تنخواہیں اور دیگر مراعات کو روکیں۔

اس کے علاوہ یہ بھی استدعا کی گئی ہے کہ عدالت عالیہ الیکشن کمیشن کو حکم دے کہ پاکستان تحریک انصاف کے ارکان کے استعفوں کی وجہ سے خالی ہونے والی نشستوں پر ضمنی انتخابات کروائے جائیں۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے رجسٹرار آفس نے اس درخواست پر اعتراضات لگائے تھے اور کہا تھا کہ اس حوالے سے مناسب فورم موجود ہیں اگر وہاں سے دادرسی نہیں ہوتی تو پھر عدالت سے رجوع کیا جاسکتا ہے۔

Image caption وزیر دفاع خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ منتخب پارلیمنٹ کو جعلی پارلیمنٹ کہنے والے اب کس منہ سے ایوان میں بیٹھے ہیں

درخواست گزار کا کہنا تھا کہ اس درخواست کو اعتراضات کے ساتھ سماعت کے لیے منظور کیا جائے اور وہ سماعت کے دوران دلائل کے ذریعے ان اعتراضات کو دور کرنے کی کوشش کریں گے۔

یمن کی صورت حال پر پارلیمان کے مشترکہ اجلاس میں پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان سمیت دیگر ارکان اسمبلی کی شمولیت پر حکومتی بینچوں سمیت حزب مخالف کی جماعت متحدہ قومی موومنٹ کی طرف سے بھی اُنھیں تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔

وزیر دفاع خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ منتخب پارلیمنٹ کو جعلی پارلیمنٹ کہنے والے اب کس منہ سے ایوان میں بیٹھے ہیں۔

یاد رہے کہ اس درخواست کی سماعت کرنے والے دو رکنی بینچ کے سربراہ اطہر من اللہ ہیں۔

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے سنہ 2013 میں ہونے والے عام انتخابات میں دھاندلی کروانے کا الزام افتخار محمد چوہدری پر عائد کیا تھا۔ جس کے خلاف پاکستان کے سابق چیف جسٹس نے اسلام آباد کی ایک مقامی عدالت میں عمران خان پر ہتکِ عزت کا دعوی دائر کر رکھا ہے۔

اسی بارے میں