مشرف کے وارنٹ گرفتاری کے اجرا کا فیصلہ معطل

Image caption پرویز مشرف نے بطور فوجی صدر لال مسجد میں فوجی آپریشن کا حکم دیا تھا

پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد کی ہائی کورٹ نے لال مسجد کے سابق نائب خطیب غازی عبدالرشید کے مقدمۂ قتل میں سابق فوجی صدر پرویز مشرف کی گرفتاری کے ناقابلِ ضمانت وارنٹ کے اجرا کا فیصلہ مشروط طور پر معطل کر دیا۔

اسلام آباد کی ہی ایک مقامی عدالت کے ایڈیشنل جج واجد علی نے دو اپریل کو پرویز مشرف کے ناقابلِ ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کیے تھے پولیس کو انھیں27 اپریل کو عدالت میں پیش کرنے کا حکم دیا تھا۔

وارنٹ گرفتاری معطل کرنے کا حکم بدھ کو اسلام آباد ہائی کورٹ کے جج جسٹس نور الحق قریشی نے اس معاملے پر پرویز مشرف کے وکیل کی جانب سے دائر شدہ درخواست پر دیا۔

عدالت نے مشرف کے وکیل کو حلف نامہ جمع کروانے کی ہدایت دی کہ ان کے موکل سیشن جج کے حکم کی تعمیل میں 27 اپریل کو عدالت میں پیش ہو جائیں گے۔

جسٹس نور الحق قریشی کا کہنا تھا کہ اگر پرویز مشرف آئندہ سماعت پر مقدمے کی سماعت کرنے والی عدالت میں پیش نہ ہوئے تو ان کے ناقابلِ ضمانت وارنٹ موثر ہو جائیں گے۔

اسلام آباد کی مقامی عدالت نے اس سے پہلے دس مارچ کو سابق فوجی صدر کے قابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کیے تھے اور اُنھیں ایک لاکھ روپے کے ضمانتی مچلکے بھی جمع کروانے کا حکم دیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption 2007 میں اسلام آباد میں واقع لال مسجد میں ہونے والے فوجی آپریشن میں مسجد کے نائب خطیب غازی عبدالرشید ہلاک ہوگئے تھے

تاہم دو اپریل کو پرویز مشرف کے عدالت میں پیش نہ ہونے پر اُن کے ضمانتی مچلکے بھی ضبط کر لیے گئے اور جج نے اُن کے قابل ضمانت وارنٹ کو ناقابل ضمانت ورانٹ میں تبدیل کر دیا تھا۔

یاد رہے کہ 2007 میں اسلام آباد میں واقع لال مسجد میں ہونے والے فوجی آپریشن میں مسجد کے نائب خطیب غازی عبدالرشید ہلاک ہوگئے تھے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے جولائی 2013 میں اسلام آباد پولیس کو ہدایت کی تھی کہ سنہ 2007 میں لال مسجد پر ہونے والے فوجی آپریشن سے متعلق سابق فوجی صدر پرویز مشرف کے خلاف اگر کوئی جُرم بنتا ہے تو اُن کے خلاف مقدمہ درج کیا جائے۔

لال مسجد اور اس سے ملحقہ جامعہ حفصہ میں سکیورٹی فورسز کے جانب سے آپریشن میں ایک سو سے زیادہ افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

اُس وقت کی حکومت کا کہنا تھا کہ مسجد میں شدت پسندوں نے پناہ لی ہوئی تھی جو کہ قانون کی عمل داری کو تسلیم نہیں کرتے تھے۔

اسی بارے میں