’پاکستانی فضائیہ کا افسر جاسوسی کے الزام میں زیرِ حراست‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption عدالت کو یہ نہیں بتایا گیا کہ فضائیہ کے افسر پر کس قسم کی جاسوسی کرنے کے الزامات ہیں اور تفتیش کہاں تک پہنچی ہے

جاسوسی کے الزام میں زیرِ حراست پاکستان فضائیہ کے افسر سکوارڈن لیڈر حسن کے وکیل کا کہنا ہے کہ ان کے موکل کے خلاف الزامات مفروضے پر مبنی ہیں اور حراست میں لیے جانے کے چھ ماہ بعد بھی انھیں چارج شیٹ نہیں دی گئی ہے۔

افسر کی حراست کا معاملہ پیر کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں اس وقت سامنے آیا تھا جب ان کی اہلیہ کی درخواست کی سماعت کے دوران عدالت کو بتایا گیا تھا کہ ملزم کے خلاف تحقیقات جاری ہیں جس کے بعد ان کا کورٹ مارشل کیا جائے گا۔

جسٹس نور الحق قریشی کی عدالت میں زیر سماعت اس درخواست میں پاکستان فضائیہ کی طرف سے عدالت کو آگاہ کیا گیا کہ ایئر ویپن کمپلیکس حسن ابدال میں تعینات سکوارڈن لیڈر حسن کو جاسوسی کے الزام میں گرفتار کیا گیا ہے اور اس ضمن میں ایک ٹیم ان الزامات کی تحقیقات کر رہی ہے جو جلد ہی مکمل ہو جائیں گی۔

عدالت کو یہ نہیں بتایا گیا کہ ان پر کس قسم کی جاسوسی کرنے کے الزامات ہیں اور تفتیش کہاں تک پہنچی ہے۔

درخواست گزار کے وکیل کرنل ریٹائرڈ انعام رحیم نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ جاسوسی ایک ایسا الزام ہے جو کسی پر بھی لگا کر ان کے خلاف تحقیقات شروع کی جا سکتی ہیں۔

اُنھوں نے کہا کہ سکوارڈن لیڈر کو گذشتہ برس نومبر میں حراست میں لیا گیا تھا جبکہ چھ ماہ کا عرصہ گزرنے کے باوجود ان کے خلاف کارروائی مکمل نہیں کی گئی۔

انعام الرحیم کا کہنا تھا کہ ایئرفوس ایکٹ کے تحت کس بھی اہلکار کو گرفتار کرنے سے پہلے انھیں چارج شیٹ دی جاتی ہے اور اگر ایسا ممکن نہ ہو تو 48 گھنٹوں میں ملزم کو چارج شیٹ فراہم کردی جاتی ہے جس میں اہلکار کو بتایا جاتا ہے کہ انھیں کن الزامات کے تحت گرفتار کیا گیا ہے۔

درخواست گزار کے وکیل کا کہنا تھا کہ چارج شیٹ دیے بغیر بھی کارروائی تین ماہ میں مکمل کی جاتی ہے۔ انھوں نے کہا کہ اس معاملے میں قواعد وضوابط کا خیال نہیں رکھا گیا اور ابھی تک ان کی موکلہ کے خاوند کو چارج شیٹ نہیں دی گئی۔

پاکستانی فضائیہ نے کہا ہے کہ ملزم کو نومبر میں نہیں بلکہ گذشتہ ماہ گرفتار کیا گیا ہے جس پر درخواست گزار کے وکیل نے عدالت سے استدعا کی وہ اس بارے پاکستان فضائیہ سے تحریر لے لیں کہ ملزم کو اس سال مارچ کے مہینے میں گرفتار کیا گیا ہے۔

عدالت نے اس بارے میں فضائیہ کو تحریری جواب داخل کروانے کا بھی حکم دیا ہے۔

درخواست گزار کے وکیل کا کہنا تھا کہ سکوارڈن لیڈر کو سیل میں رکھا گیا ہے جبکہ ایئرفورس ایکٹ کے تحت کسی بھی افسر کو سیل میں نہیں رکھا جاسکتا۔

انھوں نےکہا کہ سکوارڈن لیڈر کے اہل خانہ ان سے ملاقات کرکے آئے ہیں اور ان کے بقول حراست کے دوران سکوارڈن لیڈر کو تشدد کا نشانہ بھی بنایا گیا ہے۔

عدالت نے اس درخواست کی سماعت ایک ہفتے کے لیے ملتوی کر دی۔

اسی بارے میں