روشن پاکستان کے لیے ہزارہ بچوں کے خواب

Image caption خراب حالات کے باعث پاکستان سے دو لاکھ سے زائد شیعہ ہمارہ نقل مکانی کر چکے ہیں

کھیل کود اور کھلونوں کی عمر میں بلوچستان کے ہزارہ قبیلے کے بچوں کو حالات سے مقابلہ کرنا سکھایا جاتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ہزارہ ٹاؤن کے واحد مارشل آرٹس اکیڈمی میں لڑکے اور لڑکیوں کا رش لگا رہتا ہے ـ

نچلی منزل پر ایک پانچ سالہ بچہ کراٹے چاپس کر رہا ہے اور توتلی زبان میں مجھے بھی سیکھانے کی کوشش کر رہا ہے ـ چھت پر تپتی دھوپ میں بڑے لڑکے اور لڑکیوں کی مارشل آرٹس مشق چل رہی ہے۔

ہزارہ ٹاؤن کے بچے یہاں مارشل آرٹس کا فن سیکھ کر خود کو ذہنی اور جسمانی طور پر مضبوط کرتے ہیں۔ مشکلات اور نہ ہونے کے برابر وسائل کے باوجود اس اکیڈمی کے کئی شاگرد بین الاقوامی مقابلوں میں پاکستان کی پہچان بن چکے ہیں۔

Image caption یہاں بچے، نوعمر لڑکے لڑکیاں سبھی تربیت حاصل کرتے ہیں

اکیڈمی کے استاد غلام علی کا دفتر ان بچوں کے جیتے ہوئے تمغوں اور ٹرافیوں سے چمک رہا ہے۔ لیکن غلام علی کے مطابق، جیت سے زیادہ، مارشل آرٹس ان بچوں کے لیے مایوسی سے لڑنے کا ہتھیار بھی ہے۔ غلام علی نے کہا کہ ’ہماری کمیونٹی میں تمام والدین اپنے بچوں کو کراٹے سیکھنے کے لیے یہاں بھیجتے ہیں تاکہ مشکل حالات میں یہ خود کا دفاع کر سکے اور ذہنی طور پر ہر طرح کی صورتحال سے نمٹنے کی طاقت رکھ سکیں۔‘

پاکستان میں ہزارہ قبیلے کے لوگ گذشتہ کئی سالوں سے شدت پسندی کے واقعات کا نشانہ بنے رہے۔ حالات اس قدر بگڑ چکے ہیں کے انسانی حقوق کی تنظیموں کے مطابق دو لاکھ سے زائد ہزارہ نقل مکانی کر چکے ہیں۔ جبکہ پچھلے چند سالوں میں تقریبا 1200 ہزارہ عقیدے اور نسل کی بنیادوں پر ٹارگٹ ہوئے ہیں اور اپنی جان سے ہاتھ دھو چکے ہیں۔

ایسے غیر معمولی حالات سے قبیلے کی نئی نسل کو بچپن سے ہی سمجھوتا کرنا پڑتا ہے۔

غلام علی بتاتے ہیں کہ اکیڈمی میں ہر شاگرد کسی نہ کسی طرح سے شدت پسندی کے واقعات اور نسلی اور عقیدے کی بنیاد پر تعصب کا سامنا کر چکے ہیں اور اکیڈمی میں انہیں اپنے مسائل سے نمٹنے کے لیے ایک دوسرے کا سہارہ بھی ملتا ہے۔

Image caption 14 سالہ سمیرہ ان لاتعداد بچوں میں شامل ہیں جن کے والد ٹارگٹ کلنگ یا بم حملوں کا نشانہ بنے

پانچویں جماعت میں پڑھنے والی 14 سالہ سمیرہ سید بھی یہاں مارشل آرٹس سیکھ کر غم اور غصے پر قابو پانے کی کوشش میں ہیں۔ دو سال قبل مبینہ دہشت گردی کے واقعہ میں ان کے والد کو گھر سے چند قدم کے فاصلے پر اغوا کر لیا گیاتھا۔ان کے مطابق کسی حکومتی ادارے نے ان کی مدد نہیں کی۔

کمانے والے والد کے جانے کے بعد اب ان کی والدہ خاندان کا پیٹ پالنے کے لیے لوگوں کے گھروں میں کام کرتی ہیں۔ آئے دن مالک مکان گھر خالی کرانے کی دھمکیاں دیتا ہے لیکن شعیہ ہزارہ ہونے کی وجہ سے نیا گھر ملنا اتنا آسان نہیں ہے کیونکہ انہیں ایک چھوٹے سے علاقے میں محدود رہنا ہے۔ سمیرہ کی تنہائی کا احساس انہیں ڈپریشن کی طرف مسلسل دھکیلتا ہے لیکن اپنے چھوٹے بہن بھائیوں اور ماں کے خاطر یہ خود کو مستحکم کرنا چاہتی ہیں۔ پھر بھی اپنی کہانی سناتے ہوئے آواز سسکیوں سے لرزتی ہے اور آنکھوں سے آنسو بہ رہے ہیں۔ ’ہماری کسی نے بھی مدد نہیں کی، کیونکہ ہم ہزارہ ہیں؟ میں کراٹے اس لیے سیکھتی ہوں تاکہ اپنے بہن بھائیوں کو محفوظ رکھ سکوں اور دنیا کو بتا سکوں کہ غریب لوگ اور لڑکیاں بھی کچھ کر سکتی ہیں، کمزور نہیں ہیں۔‘

Image caption ہزارہ برادری سے تعلق رکھنے والوں کے کاروبار بھی شدید متاثر ہوئے ہیں

ماہرین کے مطابق گزشتہ سالوں میں ہزارہ قبیلے کی نوجوان نسل شدید دباؤ کا شکار رہی ہے۔ اب بظاہر ان کی اپنی سیکورٹی کے لیے انہیں دو کیمپ نما علاقوں میں محدود کیا گیا ہے جس میں ایک ہزارہ ٹاؤن اور دوسرا کوئٹہ کی آخری حد پر بلکل پہاڑوں کے ساتھ سمٹا ہوا مری آباد کا علاقہ ہے۔

ان علاقوں کے باہر قبیلے کے لوگوں کے تمام کاروبار بند ہو چکے ہیں نہ ہی نوجوانوں کو کوئٹہ یونیورسٹی تک رسائی ہے۔ لوگوں نے ہمیں بتایا کے ان اقدامات سے وہ خود کو محصور محسوس کرتے ہیں اور شہر کی سماجی اور معاشی زندگی سے بلکل کٹ کر رہ گیے ہیں۔

Image caption سکیورٹی وجوہات کی بنا پر ہزارہ نوجوان یونیورسٹی بھی نہیں جا سکتے

اجتماعی گھٹن کے بڑھتے احساس کے باوجود یہاں کے نوجوانوں نے اپنی شناخت کھونے نہیں دی بلکہ اپنا آزادی اظہار کا حق انوکھے طریقوں سے استعمال کیا ہے۔

ایسے نوجوانوں میں سے ’ہزارہ پارکور بائیز‘ بھی ہیں جو دنیا کے سامنے ہزارہ قبیلے کی متاثرین کی طرح عکاسی نہیں چاہتے۔ ہزارہ ٹاؤن کی مارشل آرٹس اکیڈمی سے تربیت یافتہ یہ بچے اپنے جمناسٹکس اور مارشل آرٹس کے مظاہروں سے سوشل میڈیا پر لوگوں کو دنگ کر چکے ہیں۔

پارکور ایک ایسا کھیل ہے جو کہ پوری دنیا میں سراہا جاتا ہے لیکن ان لڑکوں کو مقامی صطح پر کوئی حوصلہ افزائی نہیں ملی اور نہ ہی کوئی پلیٹ فارم ۔

ٹیم کے ایک رکن نعمت اللہ نظر نے کہا ’دنیا بھر میں سپورٹس نفرتوں کو مٹانے کا ایک زریعہ ہے لیکن بلوچستان میں ہم کو نظر انداز کیا جا رہا ہے۔ پھر بھی ہم پیغام دینا چاہتے ہیں کہ دو کیمپ نما علاقوں میں محدود ہونے کے باوجود ہم دنیا بھر میں پاکستان کا نام روشن کریں گے۔

اسی بارے میں