بھارتی ’را‘ دہشتگردی میں ملوث ہے: پاکستانی سیکریٹری خارجہ

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption قاضی خلیل اللہ کا کہنا تھا کہ امریکی صحافی سیمر ہرش کی جانب سے پاکستان پر لگائے گئے الزامات بے بنیاد ہیں

پاکستان کے سیکریٹری خارجہ اعزاز چوہدری نے الزام عائد کیا ہے کہ بھارتی اینٹیلجنس ایجنسی ’را‘ پاکستان میں دہشت گردی کی کارروائیوں میں ملوث ہے۔

اسلام آباد میں ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھاکہ ’ ہم مسلسل بھارت سے را کی پاکستان میں مداخلت کے حوالے سے بات کر چکے ہیں۔‘

دولتِ اسلامیہ کے حوالے سے وزارتِ خارجہ کے ترجمان کا کہنا تھا کہ’ پاکستان میں دولتِ اسلامیہ موجود نہیں ہے اور ہماری سکیورٹی فورسز کسی بھی قسم کے خطرے سے نمٹنے کے لیے ہوشیار ہیں۔‘

حالیہ سعودی عرب اور یمن کے تنازعے کے متعلق ان کہنا تھا کہ پاکستان سعودی جنگ بندی کے فیصلے کا خیر مقدم کرتا ہے۔

بھارتی وزیر اعظم کی جانب سے آنے والی خبر پر جس میں ان کا کہنا تھا کہ وہ کرکٹ کے حوالے سے دونوں ملکوں کے تعلقات بہتر کرنا چاہتے ہیں، قاضی خلیل کا کہنا تھا کہ پاکستان بھارت کی جانب سے اس قسم کے مثبت بیانات کا خیر مقدم کرتا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ دونوں ملکوں کے درمیان کرکٹ میچوں سے دونوں ممالک کے عوام ہمیشہ قریب آئے ہیں اور بھارت کے خلاف کرکٹ سریز پاکستان کی خواہش ہے۔

ادھر پاکستانی وزارتِ خارجہ نے دو مئی کو ایبٹ آباد میں اوسامہ بن لادن کے خلاف ہوئے امریکی آپریشن کا پاکستانی حکومت کو پہلے سے علم ہونے کے الزامات کو مسترد کر دیا ہے۔

پاکستانی ذرائع ابلاغ کے مطابق جمعرات کو ہفتہ وار بریفنگ کے دوران وزارتِ خارجہ کے ترجمان قاضی خلیل اللہ کا کہنا تھا کہ امریکی صحافی سیمر ہرش کی جانب سے پاکستان پر لگائے گئے الزامات بے بنیاد ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان دہشت گردی کو مکمل طور پر ختم کرنے کے لیے پر عزم ہے اور اس مقصد کو پورا کرنے کے لیے بہت سی قربانیاں دے چکاہے۔

انھوں نے مزید کہا کہ دہشت گردوں کے خلاف جاری فوجی آپریشن اس کی واضح مثال ہے۔

بھارتی اٹیلیجنس ایجنسی را کے پاکستان کے خلاف افغان سرزمین کے استعمال کے حوالے سے پوچھے گئے سوال پر قاضی خلیل کا کہنا تھا کہ پاکستان اور افغانستان کے درمیان یہ بات واضح ہے کہ ایک دوسرے کے خلاف اپنی سرزمین استعمال نہیں ہونے دیں گے۔

انھوں نے کہا کہ افغانستان کو یہ پیغام دے دیا گیا ہے کہ وہ را کو پاکستان میں عدم استحکام پیدا کرنے کے لیے اپنی سر زمین استعمال نہ کرنے دیں۔

اسی بارے میں