’نہ پراکسی وار لڑی اور نہ ہی دوسروں کو پاکستان میں لڑنے دیں گے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ’کشمیر تقسیم ہند کا نامکمل ایجنڈا ہے۔ پاکستان اور کشمیر کو علیحدہ نہیں کیا جاسکتا‘

پاکستانی فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پر آر کے مطابق بّری فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف نے کہا ہے کہ پاکستان دوسرے ممالک میں پراکسی وار لڑنے کے خلاف ہے اور کسی کو پاکستان میں پراکسی وار لڑنے کی اجازت نہیں دے گا۔

یہ بات ڈائریکٹر جنرل آئی ایس پر آر میجر جنرل عاصم سلیم باجوہ کی جانب سے ٹوئٹر پر دیے گئے ایک پیغام میں کہی گئی ہے۔

’غیر ملکی ایجنسیاں بلوچستان کو غیر مستحکم کرنے سے باز رہیں‘

’شدت پسندی کے خاتمے کے لیے اداروں میں تعاون ضروری‘

دوسری جانب پاکستان کے دفترِ خارجہ نے بدھ کو ایک بیان میں کہا ہے کہ کشمیر متنازع علاقہ ہے لیکن بھارت اقوام متحدہ کی قرار دادوں کی خلاف ورزیاں کرتے ہوئے اس کو اپنا حصہ قرار دیتا ہے۔

ڈائریکٹر جنرل آئی ایس پر آر کے بیان کے مطابق جنرل راحیل شریف نے یہ بات نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی میں خطاب کے دوران کہی۔

بیان کے مطابق جنرل راحیل شریف نے کہا کہ مستقبل میں لڑی جانے والی جنگوں کے نقش و نگار بدل گئے ہیں۔

’ہمارے دشمن ملک میں دہشت گردوں کی حمایت کر کے مسلح تصادم کو ہوا دے رہا ہے اور ملک کو غیر مستحکم کرنا چاہتا ہے لیکن دشمن کے مذموم عزائم کو شکست دینے کے لیے ہمارا عزم پختہ ہے۔‘

نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی میں خطاب میں انھوں نے کشمیر پر بات کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر تقسیم ہند کا نامکمل ایجنڈا ہے اور پاکستان اور کشمیر کو علیحدہ نہیں کیا جا سکتا۔

انھوں نے مزید کہا: ’اگرچہ ہم خطے میں امن اور استحکام چاہتے ہیں، لیکن ہم اقوام متحدہ کی قرار دادوں کی روشنی میں کشمیر کا حل چاہتے ہیں تاکہ خطے میں پائیدار امن قائم ہو سکے۔‘

بّری فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف نے فوجی آپریشن ضرب عضب کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ اس آپریشن میں کامیابیاں حاصل ہوئی ہیں اور اب شہری علاقوں میں شدت پسندوں کے خلاف کارروائی کا وقت آ گیا ہے۔

’اس سلسلے میں سول ملٹری روابط میں مزید بہتری انتہائی اہم ہو گئی ہے۔‘

دفترِ خارجہ کا بیان

پاکستان کے دفترِ خارجہ نے بدھ کو ایک بیان میں کہا ہے کہ کشمیر ایک متنازع علاقہ ہے لیکن بھارت اقوام متحدہ کی قرار دادوں کی خلاف ورزیاں کرتے ہوئے اس کو بھارت کا حصہ قرار دیتا ہے۔

دفترِ خارجہ کے ترجمان کی جانب سے بیان میں کہا گیا ہے کہ بھارت نے جموں و کشمیر پر ناجائز قبضہ کیا ہوا ہے۔ ’اس متنازع علاقے پر ناجائز قبضہ برقرار رکھنے کے لیے بھارت نے سات لاکھ فوجی تعینات کر رکھے ہیں جو کشمیریوں کی آواز دبانے کی کوشش کر رہے ہیں۔‘

دوسری جانب سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق بھارت میں پاکستان کے ہائی کمشنر عبدالباسط نے وزیراعظم پاکستان سے بدھ کو ملاقات کی ہے۔

اسی بارے میں